Follow by Email

Tuesday, 29 October 2013

جرم  کا   انکشاف   کرنا   ہے
اب  ہمیں  اعتراف   کرنا   ہے

ہمکو  ہر  پل  گناہ  کرنے  ہیں
تجھکو  ہر  پل  معاف کرنا  ہے

ایک   گرداب  کی  طرح   ہمکو
جانے  کب تک طواف کرنا  ہے

جنگ لڑنی   ہے اپنی متی سے
خود کو خود کے خلاف کرنا ہے

حق  بیانی  سے   کام   لینا  ہے
سارا  قصّہ  ہی  صاف  کرنا  ہے

مان   جانا  ہے  ہمکو آخر 'میں 
بے  سبب   اختلاف   کرنا   ہے

ان چٹانوں میں  در  کھلے کوئی
اتنا    گہرا    شگاف   کرنا   ہے

منش شکلا




اپنے ہونے کی طلب  طلب  کرتے  ہیں  ہم
قید    ہستی    منتخب     کرتے    ہیں   ہم

جانے   کیوں   اکثر   یہ   لگتا  ہے  ہمیں
کام   سارے  بے  سبب    کرتے  ہیں  ہم

زندگی    ک  و  آج   تک   سمجھے   نہیں
  اب  تلک   نام   و  نسب   کرتے   ہیں   ہم

آرزو     ہمکو        تبسّم       کی       مگر
 آنسوں    کا    بھی   ادب   کرتے  ہیں   ہم

 جن    زمینوں   پر    کوئی     چلتا     نہیں
 ان  زمینوں   پر   غضب   کرتے   ہیں   ہم

کیا    ہوا   ؟ ہوگا؟   ہوا    جاتا ہے     کیا؟
  اسکی  کچھ پروا ہی  کب   کرتے   ہیں   ہم

  لوگ   حیرانی   سے   تکتے   ہیں    ہمیں
   کام   ہی    ایسے    عجب   کرتے   ہیں  ہم


 منش شکلا









خیالوں کا فلک احساس کے تاروں سے جڑنے میں
رہے  مصروف  ہم  کچھ  مشتبہ   الفاظ گدھنے میں 

 ہمیں   کچھ  اور کرنے  کی تو مہلت ہی نہ مل  پایئ 
ہوا   ضایع   ہمارا  وقت  بس  ملنے  بچھڑنے  میں 

 کہیں  برسوں  میں  جاکر  کھل  کا  سامان جٹ  پایا 
  مگر  اک   پل  لگا  اچھا  بھلا  مجمع  اکھڈنے  میں 

   کوئی  لمحہ  نہیں  ایسا کہ جو  ہاتھوں  میں آیا   ہو 
   گیئ  ہے  عمر  ساری  عمر  کی  تتلی  پکڑنے  میں 

   ہم  اپنے  جرم  کا  اقبال  تو  ویسے  بھی  کر  لیتے 
    عبث   جلدی  دکھائی   یار  نے   الزام   مڈھنے  میں 

    کہیں  آخر   میں  جاکے  عشق کا مطلب سمجھ  پاے 
     لگی  اک  عمر  ہمکو عاشقی  کا درص  پڑھنے  میں 

      اجڑنے   کا   بہت  افسوس   ہے  لیکن  ستم  یہ  ہے 
      تمہارا    ہاتھ    شامل   تھا  مری  دنیا  اجڑنے   میں 

       ہوس  بچتی  ہے  سر  پر  عشق  کا  الزام  لینے سے 
        محبّت  اف   نہیں   کرتی مگر سولیپہ پہ  چڈھنے میں 

       کیسے  دریا  کی حاجت  ہے کسے  سیراب  ہونا  ہے
       مزہ   آنے   لگا   اب  ریت    پر  ایڈی  رگدنے   میں 

منش شکلا 





پاؤں رب کے ہیں آبلے رب کے
ریگزاروں کے سلسلے رب کے

ہمکو تسلیم ہے رضا اسکی
ماں  جاتے ہیں  فیصلے رب کے

اب زمیں معتبر نہیں لگتی
ہمنےدیکھے  ہیں  زلزلے رب کے

اول اول کی وہ  پرستش  بھی
دل میں رہتے تھے ولولے رب کے

خود کو جب خاک میں ملا ڈالا
نقش پا ہمکو تب میل رب کے

شوق دیدار مر گیا جس دن
تب  کہیں جا کےدر  کھلے رب کے

ہمکو چلنا ہے صرف چلنا ہے
قربتیں رب کی فاصلے رب کے
منش شکلا