Follow by Email

Friday, 26 June 2015




 غزل

 کاغذوں  پر مفلسی  کے  مورچے  سر ہو گئے
اور   کہنے  کے   لئے   حالات   بہتر  ہو   گئے

پیاس  کی  شدّت  کے  ماروں کی  اذیت دیکھئے 
خشک  آنکھوں میں ندی کے خواب پتھر ہو گئے 

ذرّا  ذرّا  خوف  میں  ہے  گوشہ  گوشہ  جل رہا 
اب کے  موسم کے نہ جانے کیسے تیور ہو گئے 

سب  کے سب  سلجھا رہے ہیں آسماں کی گتھیاں 
مسلۓ   سارے  زمیں  کے حاشیے   پر  ہو  گئے 

اک    بگولا  دیر  سے نظروں میں ہے ٹھہرا ہوا 
گم  کہاں  جانے  وہ  سارے  سبز  منظر  ہو  گئے 

پھول  اب  کرنے  لگے  ہیں  خودکشی  کا فیصلہ 
باغ  کے  حالات  دیکھو  کتنے  ابتر    ہو   گئے 

ہم نے   تو  پاس  ادب  میں  بندہ  پرور  کہہ  دیا 
اور  وہ  سمجھے  کہ سچ میں بندہ پرور ہو گئے 

منش شکلا  


Thursday, 25 June 2015



منش شکلا  

ولد -  شری اودے شنکر شکلا 

پیدایش - ١٩٧١

تعلیم - ایم اے لکھنو یونیورسٹی

 پتہ  ٨/٤ دالی باغ آفیسرس کالونی
لکھنؤ
ذریہ معا ش - سرکاری نوکری

بیس برس سےغزل گوئی کی کوشش جاری ہے

بہت سے رسائل اور اخبارات میں شایع

مشا عروں  میں شرکت

ٹی  وی ریڈیو کے مشا عروں اور نشستوں میں شرکت

٢٠١٢ میں غلوں کا مجموعہ " خواب پتھر ہو گئے "  شایع
جس پر اتر پردیش اردو اکادمی اور سرکار کی طرف سے عزاز دئے  گئے





                       غزل 

     ہر  منظر  کا  مول   چکانا  پڑتا    ہے 
     آنکھوں   کو اک دن پتھرانا  پڑتا  ہے 

     منزل تک سب دشت  زدہ ہو جاتے ہیں 
     رستے   میں  اتنا   ویرانہ   پڑتا   ہے 

     جو  باتیں لا حاصل  ٹھہریں  پہلے بھی 
     ان باتوں   کو  ہی  دہرانا    پڑتا   ہے 

     خواہش  ہے   اپنا  قصّہ لکھ دیں لیکن 
     بیچ   میں   تیرا  بھی  افسانہ  پڑتا  ہے 

      جھوٹ کے اپنے خمیازے تو ہوتے ہیں 
    لیکن  سچ  پر   بھی  جر مانہ  پڑتا ہے 

     گرویدہ    ہونا    پڑتا   ہے   ہر  شے پر 
     پھر ہر اک   شے  سے  اکتانا  پڑتا  ہے 

      بستی  ہم   میں  سنّاٹے   بھر  دیتی  ہے 
       صحرا    صحرا   شور   مچانا   پڑتا  ہے 

منش شکلا 

Wednesday, 24 June 2015



            غزل

            ماضی  میں  کھلنے  والے  ہر  باب  سے  لپٹی  رہتی  ہیں
            جانے   والوں   کی   یادیں   اسباب   سے  لپٹی  رہتی  ہیں

            اہل   سفر   تو   گم  ہو  جاتے  ہیں   جاکر   گہرائی   میں
             کشتی   کی   ٹوٹی   باہیں   گرداب   سے   لپٹی  رہتی  ہیں

             کبھی کبھی کچھ ایسے دلکش منظردکھتے  ہیں شب بھر 
             نیند بھی کھل جائے تو آنکھیں  خواب سے لپٹی رہتی ہیں

             ترک   تعلّق   ختم   نہیں   کر   پاتا  ہے  احساسوں    کو
              رشتوں  کی  ٹوٹی   کڑیاں  احباب  سے   لپٹی   رہتی  ہیں

              طوفانوں   کا   زور   بہا  لے   جاتا   ہے    بنیادوں    کو
               ریزہ  ریزہ   تعمیریں   سیلاب   سے   لپٹی    رہتی    ہیں

            اجڑے   گھر  کی  ویرانی  کا   سوگ   منانے  کی  خاطر
             خستہ  چھت  کی  شہتیریں  محراب  سے لپٹی  رہتیں ہیں

              اس کو دن بھر  تکتے  تکتے  ڈوب  تو  جاتا  ہے  لیکن
              سورج  کی  بجھتی  نظریں  مہتاب  سے  لپٹی  رہتی  ہیں

منش شکلا 

Monday, 22 June 2015




   ग़ज़ल 

   
मुहब्बत   की   फ़रावानी    मुबारक। 
तुम्हें  आँखों  की तुग़यानी  मुबारक। 

तुम्हारा    चाँद   पूरा    हो   गया   है ,
तुम्हें   ठहरा    हुआ  पानी   मुबारक।

उतर  आया   है  दिल   में   नूर  कोई ,
तुम्हें   चेहरे   की   ताबानी  मुबारक। 

किसी पर  फिर  यक़ीं  करने  लगे हो ,
तुम्हें  फिर  से   ये  नादानी  मुबारक। 

तुम  अपनी  बात   कहना  जानते हो ,
तुम्हें लफ़्ज़ों   की  आसानी  मुबारक। 

तुम्हें ये शोर ओ ग़ुल नैरंग ए दुनिया ,
हमें   सहरा   की    वीरानी   मुबारक। 

कोई    सूरत    मुरत्तब    हो   रही    है,
ख़यालों    की     परेशानी    मुबारक। 

मनीष शुक्ला 




    غزل 

 محبّت   کی    فراوانی    مبارک 
تمھیں آنکھوں کی طغیانی مبارک 

تمھارا  چاند  پورا  ہو  گیا   ہے 
تمھیں   ٹھہرا  ہوا  پانی  مبارک 

اتر   آیا  ہے  دل  میں  نور کوئی 
تمھیں  چہرے  کی  تابانی مبارک 

کسی  پر پھر یقیں کرنے لگے ہو 
تمھیں  پھر سے یہ  نادانی مبارک 

تم   اپنی   بات   کہنا   جانتے  ہو 
تمھیں  لفظوں  کی  آسانی  مبارک 

تمھیں  یہ شور و غل نیرنگ دنیا 
ہمیں  صحرا  کی  ویرانی  مبارک 

کوئی  صورت  مرتب ہو رہی ہے 
خیالوں   کی    پریشانی   مبارک 

منش شکلا