Follow by Email

Friday, 31 March 2017




جب  آسمان  کا  سمجھے  نہیں  اشارہ  تم 
تو پھر زمیں کو کہاں رہ  سکے  گوارا  تم 

تمھارے  دیر  کا   سب  سے  حقیر ذرّہ  ہم 
ہمارے  چرخ  کا سب سے حسیں ستارہ  تم 

اب  اس  کے  بعد  ہمیں دید کی نہیں حاجت 
نظر  کے  واسطے  ہو   آخری   نظارہ  تم 

بڑھا  کے  قربتیں   بیمار  کر  دیا   ہم   کو 
اب  آ کے  حال  بھی  پوچھو کبھی ہمارا تم 

تمھاری  آگ  میں  جلتے  ہوئے  سراپا  ہم 
ہماری  راکھ   میں   سویا   ہوا   شرارہ  تم 

تمھاری  بات  پہ  ہم  کو  ہنسیں سی آتی ہے 
ہمارا   حال    نہ    پوچھا   کرو   خدارا  تم 

ہمارے  ساتھ  سے  تم  مطمئیں   نہیں لگتے 
ہمارے  ساتھ  میں  کرتے  تو  ہو گزارہ   تم 
منیش شکلا 

Tuesday, 28 March 2017

آنکھوں کو پر نم حسرت کا دروازہ وا رکھا ہے
اپنے ٹوٹے خواب کو ہم نے اب تک زندہ رکھ

عشق کیا تو ٹوٹ کے جی بھر نفرت کی تو شدّت سے ,
اپنے ہر کردار کا چہرہ ہم نے اجلا رکھا ہے .

جو آیا بازار میں وہ بس جانچ پرکھ کر چھوڈ گیا ,
ہم نے خود کو سوچ سمجھ کر تھوڑا مہنگا رکھا ہے .

تھا اعلان کہانی میں اک روز ندی بھی آےگی ,
ہم نے اس امید میں خود کو اب تک پیاسا رکھا ہے .

ہم کو ہر چہرے کے پیچھے سو سو چہرے دکھتے ہیں ,
قدرت نے آنکھوں میں جانے کیسا شیشہ رکھا ہے .

اکثر شیریں کی چاہت نے کوہ کنی کروائی ہے ,
اکثر پربت کے سینے پر ہم نے تیشہ رکھا ہے .

ہم کو اب خود رستہ چل کر منزل تک پہنچےگا ,
کاندھوں پر سورج ہے اپنے سر پر سایہ رکھا ہے .

ہم سے باتیں کرنے والے الجھن میں پڑ جاتے ہیں ,
ہم نے اپنے اندر خود کو اتنا بکھرا رکھا ہے .

تم نے لہجہ میٹھا رکھ کر تیکھی باتیں بولی ہیں ,
ہم نے باتیں میٹھی کی ہیں لہجہ تیکھا رکھا ہے .

دنیا والوں نے تو پوری کوشش کی ٹھکرانے کی ,
لیکن اپنی ضد میں ہم نے خود کو منوا رکھا ہے
منیش شکلا

Wednesday, 1 March 2017


لغزش    کا ا  علان   کیا   ہم   دونوں    نے 
جرم    عظیم ا لشان    کیا   ہم   دونوں   نے

اک   دوجے   کو  آخر   حاصل  کر    بیٹھے 
خود   اپنا   نقصان   کیا   ہم    دونوں    نے 

دنیا  جس  رستے   کو  مشکل   کہتی  تھی 
وہ   رستہ   آسان    کی  ا ہم   دونوں   نے 

پہلے  سنّاٹوں    کی    محفل   لگتی    تھی 
صحرا    کو   ویران   کیا  ہم    دونوں   نے 

لوگ ہمیں بس دوست سمجھتے تھے شاید 
لوگوں   کو   حیران   کیا   ہم دونوں   نے 

عشق   کا   پھندا   ڈال   لیا  ہے گردن  میں 
پھانسی  کا   سامان   کیا   ہم   دونوں   نے 

قربانی    کا   مطلب   بھی   معلوم   نہ  تھا 
خود  کو  جب   قربان   کیا  ہم   دونوں   نے 

دانائ    سے   عشق    کہاں    ہو  پاتا   ہے 
خود  کو  کچھ  ناداں   کیا   ہم   دونوں   نے 

اک   دوجے   کو   تول  لیا ا ک لمحے میں 
آنکھوں   کو  میزان   کیا   ہم   دونوں   نے 

ہونٹوں    کو  اک  نئ ی کہانی بخش  گئے 
دنیا  پر   احسان     کیا   ہم    دونوں   نے 
منیش شکلا