Follow by Email

Monday, 29 May 2017




 گھبرا   کر  افلاک  کی  دہشت  گردی   سے 
 خود   کو ہم نے  توڈ  دیا  بے  دردی   سے 

 ہم    نے  خود    یہ   حال   بنایا   ہے  اپنا 
 ہم  سے  باتیں  مت  کرئے  ہم  دردی  سے 

  جب   خود   کو   ہر  طور  بیاباں   کر   ڈالا 
تب   جاکر   باز   آے   دشت   نوردی   سے 

اب  بھی  کیا  کچھ  کہنے  کی  گنجایش  ہے 
سب  کچھ ظاہر ہے چہرے  کی   زردی  سے 

تم   آکر  کچھ  وقت   کی  گرماہٹ  بھر   دو 
لمحے  کانپ  رہے  ہیں دیکھو  سردی  سے 

ہم   اک  بار  بھٹک  کر   اتنا   بھٹکے  ہیں 
اب   تک   ڈرتے   ہیں   آوارہ   گردی  سے 

ہم  بھی  عشق  کی پگڈنڈی سے گزرے  ہیں 
واقف   ہیں  پیچ  و  خم  کی  سردردی  سے 

منیش شکلا 

Sunday, 28 May 2017




कभी कभी कुछ ऐसे दिलकश मंज़र दिखते हैं शब भर ,
नींद भी  खुल  जाए तो आँखें ख़्वाब से लिपटी रहती हैं...... 

                 کبھی کبھی کچھ ایسے دلکش منظر دکھتے ہیں شب بھر 
                  نیند بھی کھل جائے تو آنکھیں خواب سے لپٹی رہتی ہیں .....

Thursday, 25 May 2017




کام  بے  کار  کے    کئے   ہوتے 
کاش  ہم ٹھیک سے  جئے   ہوتے 

رقص    کرتے   خراب  حالی   پر 
اشک  غم   جھوم  کر پئے  ہوتے 

درد       ناقابل      مداوا      تھا 
ہاں  مگر  زخم  تو   سئے   ہوتے 

در  حقیقت  تو   خواب  تھی  دنیا 
ہم بھی خوابوں میں جی لئے ہوتے 

ایک  خواہش  ہی  رہ گئی دل  میں 
ہم ترے    طاق   کے   دئے  ہوتے 

تو  نہ  ہوتا  تو  اس  خرابے  میں 
سب  کے  ہونٹھوں پہ مرثیے  ہوتے 

بزم    اپنے    عروج    پر   ہوتی 
اور   ہم  اٹھ  کے  چل  دئے  ہوتے 

نا    مکمّل     رہی    غزل     اپنی 
کاش   کچھ   اور     قافئے   ہوتے 
منیش شکلا