Follow by Email

Monday, 28 August 2017



رات    کو   اب   بری   کیا   جاے  
خواب    کو    ملتوی   کیا    جاے  

اب   جنوں  ہی  ہے آ خری  چارہ 
ٹھیک   ہے  پھر  وہی  کیا   جاے 

آخری    وار      رہ     گیا     باقی 
آخری    وار     بھی    کیا    جاے 

وہ   میسّر   تو   ہو   نہیں   سکتا 
کم   سے  کم  یاد   ہی   کیا   جاے 

زلف    سے   سائباں   بنا   دو  تم 
دھوپ    کو   چاندنی    کیا    جاے 

اک    شرارہ    تو   ہو گیا  روشن 
اب  اسے    روشنی    کیا    جاے 

تجھ کو دیکھوں تو دل میں آتا ہے 
کفر        تازندگی      کیا      جاے 
منیش شکلا  

Wednesday, 23 August 2017




     غزل   

مخالفین    کو   حیران    کرنے  والا     ہوں 
میں  اپنی  ہار  کا   اعلان  کرنے  والا   ہوں 

سنا  ہے  دشت میں وحشت سکون  پاتی ہے 
سو   اپنے   آپکو  ویران  کرنے  والا   ہوں 

فضا    میں  چھوڈ  رہا  ہوں  خیال  کا   طایر 
سکوت   عرش  کو  گنجان  کرنے  والا  ہوں 

مٹا    رہا    ہوں   خرد   کی   تمام    تشبیہیں 
جنوں    کا  راستہ   آسان    کرنے  والا  ہوں 

حقیقتوں     سے    کہو    ہوشیار   ہو  جایئں  
میں   اپنے  خواب کو  میزان کرنے والا ہوں 

کوئی    خدا    محبّت    کو   باخبر  کر    دے 
میں خود کو عشق میں قربان کرنے والا ہوں 

سجا  رہا    ہوں   تبسّم    کا  اک   نیا   لشکر 
ہجوم   یاس   کا   نقصان   کرنے   والا  ہوں 

منش شکلا 

Friday, 11 August 2017




بات    کرنے   میں   اگر  شرماینگے  
آپ   پھر  آگے  کہاں    بڑھ   پاینگے  

ہم   وہاں   سجدہ   کہاں  کر  پاینگے  
جاینگے دیکھیںگے  اور مر جاینگے 

کم سے کم تم   دھیان   تو دینے لگے 
ہم   ابھی    تسلیم   بھی    کرواینگے 

آپ   پر     جادو    ذرا   چلنے  لگے 
پھر زمانے پر  بھی ہم   چھا جاینگے 

اک   عمل   دانشورانہ   بھی  ہے  پر 
ہم نے  سوچا ہے  کہ دھوکا   کہیںگے 

آنکھ   موندے  ہی  گزر  جاینگے ہم 
سارے  منظر  دیکھتے   رہ  جاینگے 

چوری چوری دیکھ لینگے پھر تمھیں 
اور    سارے     راستے   شرماینگے  

منیش شکلا