Follow by Email

Saturday, 20 August 2016




اسنے   ممکن   ہے   آزمایا   ہو 
وہ   بہانے  سے   لڈ کھڈاایا   ہو 

یہ بھی ممکن ہے بھیڈ میں  اتنی 
وہ  بھی مجھکو  نہ دیکھ پایا ہو 

ہو  بھی  سکتا ہے نیند ٹوٹی  ہو 
ہو  بھی  سکتا ہے خواب آیا  ہو 

کیوں کسی غم کو میں ودائ دوں 
ایک  آنسو  بھی  کیوں  پرایا ہو 

کاش  وہ جنگلوں میں بھٹکا  ہو 
اور  رستہ   نہ  بھول    پایا   ہو 

اب   کوئی  فرق  ہی  نہیں  پڑتا 
دھوپ برسے کہ سر پہ  سایا ہو 

تب چمک دیکھ سبزہ زاروں کی 
دشت  جب  دھوپ میں نہایا  ہو 

منیش شکلا