Follow by Email

Tuesday, 12 June 2018


کہانی  کو  کہاں  منظور  تھے  ہم
مگر  کردار  کیا  بھرپور  تھے ہم

وہاں  ہونا  پڑا  ہے   سر   بسجدہ
کشیدہ  سر  جہاں  مشہور تھے ہم

اب  آنکھیں ہی نہیں اٹھتیں ہماری
بہت  دن تک بہت مغرور تھے  ہم

وہ  قد قامت تمہارے ساتھ ہی  تھا
تمھارے  بعد  چکناچور  تھے  ہم

ہمیں اب زیر کرتے ہیں  اندھیرے
ابھی  تک  محفلوں کا نور تھے ہم

تمہاری  بات  لوگوں  نے اٹھا دی
تمہارے  نام  پر  مجبور  تھے  ہم

تمہارے  بعد  روشن  ہو  گئے ہیں
تمھارے  سامنے  بے نور تھے ہم

تمھیں  ہم شکریہ  بھی  کہ نہ پاے
تمھارے اس  قدر  مشکور تھے ہم

نئی  بستی   میں   آکر   کیا   بدلتے
پرانے   وقت  کا   دستور  تھے  ہم
منیش 


بخت کی نا فرمانی بھی تو ہو  سکتا ہے 
عزم  ترا  نادانی  بھی  تو  ہو  سکتا ہے 

گڈھتا  ہے  ہم   جیسے  مٹی   کے  پتلے 
اپنا خالق    فانی  بھی  تو  ہو  سکتا  ہے 

اتنا  پاکیزہ  رہنا   بھی   ٹھیک   ہے  کیا 
عشق  ذرا  انسانی  بھی  تو  ہو سکتا ہے 

مانا  جسم  کی  اپنی  حاجت ہے پھر بھی 
یہ  مسلہ  روحانی  بھی  تو  ہو  سکتا ہے 

کیا  کشکول  بدستی  سب   پر  لازم   ہے 
اک  شاعر  سلطانی  بھی  تو ہو سکتا ہے 

میں اس  کا دیوانہ بھی تو بن سکتی ہوں 
وہ  میری  دیوانی  بھی  تو  ہو  سکتا ہے 

اچھا  خاصا  لہجہ    بخشا  ہے  رب  نے 
یہ  لہجہ  لاثانی  بھی  تو  ہو  سکتا   ہے 

کیا   اتنے   دن   زندہ   رہنا   لازم    ہے 
مرنا   با  آسانی   بھی  تو  ہو  سکتا  ہے 

مجرم  پتھر   کا   ہو   جاۓ   ٹھیک  مگر 
شرم  سے پانی پانی بھی تو ہو سکتا ہے 

منیش 


وہی   منظر     دوبارہ    دیکھنا     ہے 
اسے سارے   کا    سارا  دیکھنا   ہے 

شبیہیں  چھین  لو آنکھوں  سے  ساری  
اسے    بے    استعارہ      دیکھنا    ہے 

وہ  جس  نے راکھ کر ڈالا  تھا   ہم   کو 
وہ  شبنم   کا     شرارہ    دیکھنا    ہے 

ابھی  تک سحر میں جس کے بندھے ہیں  
وہ   جادو   کا     نظارہ      دیکھنا    ہے 

ہماری      آخری     قیمت       لگا    دو 
 ہمیں   پورا     خسارہ      دیکھنا     ہے 

ہمیں     پروا      نہیں    موج     بلا کی 
فقط    اس   کا    اشارہ     دیکھنا   ہے 

کنارے    سے   بھنور  کو دیکھتے ہیں  
وہاں   جا    کے   کنارہ    دیکھنا    ہے 

منیش 

Tuesday, 29 May 2018


ہم  آ  کے   لوٹ   گئے  تھے   جہاں   بلایا   تھا 
تمھارے   ساتھ   کوئی   دوسرا   بھی   آیا   تھا 

ہمیں   بھی  دشت  کی  وسعت  کو  پار کرنا  تھا 
ہمارے    پاس    مگر   آنسوں    کا    سیا   تھا 

ہم   اپنے   آپ   کا   کس   سے خطاب  کر  لیتے 
ہر   ایک   شخص   وہاں   بزم   میں   پرایا  تھا 

وہ   اک   زمین   کا  ٹکڑا   اداس   ہے   اب  تک 
ہمارے   خواب   کو   تم   نے   جہاں  گرایا   تھا 

ستارہ   بن   کے    فراموش   کر   دیا    ہم    کو 
ہمیں   نے  خاک  سے  تم  کو  کبھی  اٹھایا  تھا 

اب   اپنے  آپ  سے  سب  کچھ  اتار  پھینکا ہیں 
تمھارے  واسطے  خود   کو  کبھی  سجایا   تھا 

ہمارے  پاس  بھی  ایسے   حسین   لمحے  تھے 
جب    اپنے   آپ   کو  ہم   نے  بہت   رلایا   تھا 

تمھاری   اور   زمانے   کی   کیا   کہیں  ہم   دم 
خود   اپنے   آپ   کو   ہم  نے   بہت  ستایا  تھا 

ہمیں  بھی  چاند  نے  بخشا  تھا  چاندنی  جھومر 
ہماری    رات   کا    ماتھا   بھی   جگمگایا   تھا 

ہمارا     ہوش     اچانک     سنبھل     گیا   ورنہ 
 ہمارا    جسم      کئی      بار      ڈگمگایا       تھا 

تمھاری     بات   پہ  ہم  کو  یقین  بھی  کم   تھا 
تمھاری   آنکھ  میں آنسو  بھی   جھلملایا    تھا 

ہمیں بھی برق نے بخشی تھیں عظمتیں کچھ  پل 
ہمارے    نام    کا   پتھر    بھی     تمتمایا    تھا 

منیش شکلا 


وہ    بظاھر   فقیر    بنتا    ہے 
اس   کی شہ  پر  وزیر بنتا ہے 

آدمی  ہی سے عبرتیں بھی ہیں 
آدمی    ہی     نظیر    بنتا   ہے 

چار  دن  کا یہ کھیل  تھوڑی ہے 
کوئی  صدیوں میں  میر بنتا ہے 

وہ  نگاہیں کہاں  سے لاتے  ہو 
جن سے نظروں کا  تیر  بنتا  ہے 

قید  کرتا  ہے  وہ ہمیں خود ہی 
اور   خود  ہی   اسیر   بنتا  ہے 

اور سب یوں ہی فوت ہوتے ہیں 
بس    پیادہ     وزیر    بنتا   ہے 

سب   کی  نظریں  اتار  لیتا  ہے 
تب   کوئی   بے  نظیر  بنتا  ہے 

منیش شکلا 

Wednesday, 2 May 2018


شور و غل  کے بعد  سناہے جاینگے 
اصلی نغمیں دشت میں گاے   جاینگے 

پہلے  ہم  کو  بزم  میں  لایا  جاےگا 
پھر  اس  کے  آداب  سکھاے  جاینگے 

کچھ دن تک مہمان نوازی  بھی ہوگی 
بام  و  در  کچھ  روز  سجاے  جاینگے 

آنکھوں کو  کچھ  دن  بہلایا  جاے گا 
سچے جھوٹے  عکس  دکھاے جاینگے 

ماضی  کا   ہر   باب    تلاشا   جاےگا 
سارے   مجرم  دار  پہ  لاے    جاینگے 

شام کے وقت بدن سے باہر نکلے ہیں 
جانے  کتنی  دور  یہ   ساے   جاینگے 

سب  کو  اصلی  بات  بتانی  ہی  ہوگی 
کب  تک  یوں  ہی  بات بناے جاینگے 
منیش 
جو ابھی تک  نہیں  کہا  کہتے 
کاش  اک  شعر  تو  نیا  کہتے 

تو ہی قصّے میں جا بجا ہوتا 
تیرا  قصّہ  ہی  جا   بجا  کہتے 

تم  تو خاموش ہو گئے مل کر 
یار  کچھ  تو   بھلا   برا  کہتے 

سب  کی  آواز  مختلف   نکلی 
ہم   کسے   اپنا   ہم نوا  کہتے 

 ایک  لمحہ  نہ  مل  سکا  ایسا 
جس کو صدیوں کا سلسلہ کہتے 

ہوش  باقی  جو   رہ  گیا  ہوتا 
تیری آنکھوں کو مے کدہ  کہتے 

کاش   بےکار  ہو   گئے  ہوتے 
سب  ہمیں کچھ تو  کام  کا کہتے 

جو  بھی  ہو  زندگی  ہماری ہے 
شرم   آتی  ہے   بد مزہ   کہتے 

اپنی  پلکیں  جھپک گیں ورنہ 
لوگ  ہم  کو  بھی  دیوتا   کہتے 
منیش