Follow by Email

Monday, 18 September 2017


اچانک   آج    بھلا     کیا   دکھا   انہیں   تم  میں
بلا   کا  کرب   ہے    احباب    کے    تبسّم    میں

ہم    اپنے   درد    کا    ہر    درس   پار کر   آے
پڑے    ہوئے  ہیں  ابھی   تک  صنم   تللُم   میں

بلا  کی   پیاس  تھی  دریا  کا رخ  نہیں  سمجھے
الجھ    کے   بہ   گئے   ہم  تیز رو   تلاطم  میں

تو مجھ سے آنکھ ملانے سے بچ رہا ہے دوست
کوئی    تو   راز   نہاں   ہے   ترے   تکلّم   میں

ہمارے    پاس   بھی   ہوتے   اگر   پری   قصّے
سناتے   آپ    کو   ہم   بھی   غزل   ترنّم   میں

سبھی  کو  غرق  ہی ہونا ہے ایک دن  پھر بھی
الجھ   رہے   ہیں   سفینے   عبث   تصادم   میں

ہمیں    فرار   کی   خواہش   اسی   جہنّم   سے
ہمیں    قرار   بھی   حاصل   اسی   جہنّم    میں
منیش شکلا

Wednesday, 13 September 2017



تجھ تک آنے جانے میں ہی ٹوٹ گئے 
دیوانے  ویرانے  میں  ہی  ٹوٹ  گئے 

وہ آوروں کو کاندھا دینے والے تھے 
اپنا  بوجھ  اٹھانے  میں  ہی  ٹوٹ گئے 

ہم جو  اچھے فنکاروں میں شامل تھے 
اک  کردار  نبھانے  میں  ہی  ٹوٹ گئے 

دنیا  تک  پھر  جام  بھلا  کیسے  لاتے 
میکش  تو  میخانے  میں  ہی ٹوٹ  گئے 

ہونتھوں تک تو صرف تمازت ہی پہنچی 
نشے  تو  پیمانے  میں  ہی  ٹوٹ  گئے 

کیا   انکا    پھر  حال   تباہی  میں  ہوتا 
وہ  تو  خیر منانے  میں  ہی  ٹوٹ  گئے 

ہم   کو  اپنے   ساتھ    گزارا  کرنا  تھا 
ہم خود کو سمجھانے میں ہی ٹوٹ گئے 

اوپر   تو  بس   چاندی   سونا  ہی  آیا 
موتی   تو تہخانے   میں  ہی  ٹوٹ  گئے 

تم   کو  ساری  رات  کہانی  کہنی  تھی 
تم  تو  اک  افسانے  میں  ہی ٹوٹ  گئے  

منیش شکلا 



रात  को अब  बरी  किया  जाए। 
ख़्वाब  को  मुल्तवी  किया जाए। 

अब  जुनूं  ही   है  आख़िरी  चारा ,
ठीक  है  फिर  वही  किया जाए। 

आख़िरी  वार    रह   गया  बाक़ी ,
आख़िरी   वार   भी   किया  जाए। 

वो  मयस्सर  तो  हो  नहीं सकता ,
कम से कम  याद ही किया जाए। 

ज़ुल्फ़  से  सायबाँ   बना  दो  तुम ,
धूप    को   चांदनी   किया   जाए। 

इक   शरारा  तो  हो  गया  रौशन 
अब  इसे   रौशनी   किया   जाए। 

तुझ को  देखूं तो दिल में आता है ,
कुफ़्र   ताज़िन्दगी    किया   जाए। 

मनीष शुक्ला 


Tuesday, 12 September 2017




اچانک   آج    بھلا   کیا   دکھا    انہیں    تم   میں
بلا   کا   کرب   ہے    احباب    کے   تبسّم    میں

ہم     اپنے   درد   کا   ہر   درس   پار   کر   آے
پڑے   ہوئے   ہیں   ابھی   تک   صنم  تللُم   میں

بلا  کی  پیاس  تھی  دریا کا  رخ    نہیں   سمجھے
الجھ    کے   بہ   گئے  ہم   تیز  رو    تلاطم   میں

تو مجھ  سے آنکھ ملانے سے بچ رہا ہے دوست
کوئی   تو   راز   نہاں   ہے    ترے    تکلّم   میں

ہمارے    پاس   بھی    ہوتے   اگر   پری   قصّے
سناتے    آپ    کو    ہم    بھی   غزل    ترنّم  میں

سبھی  کو غرق  ہی  ہونا ہے  ایک   دن پھر بھی 
الجھ   رہے   ہیں    سفینے   عبث   تصادم   میں

ہمیں     فرار   کی    خواہش   اسی   جہنّم   سے 
ہمیں   قرار   بھی     حاصل   اسی    جہنّم   میں 
منیش شکلا 


Wednesday, 6 September 2017




کچھ  پوشیدہ  زخم عیاں ہو سکتے  تھے 
اس سے ملکر درد  رواں ہو سکتے  تھے 

ان    آنکھوں  کو   دیر   تلک  دیکھا  ہوتا 
ان آنکھوں میں خواب نہاں ہو سکتے تھے 

تم    نے  ایک  ستارے  کو   دنیا   سمجھا 
اس  کے آگے اور  جہاں  ہو  سکتے  تھے 

تم    تو  پہلے   دروازے   سے  لوٹ   اے 
بستی  میں کچھ اور مکاں ہو سکتے  تھے 

رفتہ     رفتہ    آ    پہنچے    ویرانے   تک 
ہم   دیوانے  اور    کہاں   ہو   سکتے  تھے 

ہر  صورت   بنتی  تھی   اور   بگڑتی  تھی 
اس  عالم میں  صرف  گماں ہو  سکتے تھے 

آگ   ہوا   اور    پانی    ہی   سرمایہ   تھا 
حد سے حد ہم  لوگ  دھواں ہو سکتے تھے 

منش شکلا 

Monday, 28 August 2017



رات    کو   اب   بری   کیا   جاے  
خواب    کو    ملتوی   کیا    جاے  

اب   جنوں  ہی  ہے آ خری  چارہ 
ٹھیک   ہے  پھر  وہی  کیا   جاے 

آخری    وار      رہ     گیا     باقی 
آخری    وار     بھی    کیا    جاے 

وہ   میسّر   تو   ہو   نہیں   سکتا 
کم   سے  کم  یاد   ہی   کیا   جاے 

زلف    سے   سائباں   بنا   دو  تم 
دھوپ    کو   چاندنی    کیا    جاے 

اک    شرارہ    تو   ہو گیا  روشن 
اب  اسے    روشنی    کیا    جاے 

تجھ کو دیکھوں تو دل میں آتا ہے 
کفر        تازندگی      کیا      جاے 
منیش شکلا  

Wednesday, 23 August 2017




     غزل   

مخالفین    کو   حیران    کرنے  والا     ہوں 
میں  اپنی  ہار  کا   اعلان  کرنے  والا   ہوں 

سنا  ہے  دشت میں وحشت سکون  پاتی ہے 
سو   اپنے   آپکو  ویران  کرنے  والا   ہوں 

فضا    میں  چھوڈ  رہا  ہوں  خیال  کا   طایر 
سکوت   عرش  کو  گنجان  کرنے  والا  ہوں 

مٹا    رہا    ہوں   خرد   کی   تمام    تشبیہیں 
جنوں    کا  راستہ   آسان    کرنے  والا  ہوں 

حقیقتوں     سے    کہو    ہوشیار   ہو  جایئں  
میں   اپنے  خواب کو  میزان کرنے والا ہوں 

کوئی    خدا    محبّت    کو   باخبر  کر    دے 
میں خود کو عشق میں قربان کرنے والا ہوں 

سجا  رہا    ہوں   تبسّم    کا  اک   نیا   لشکر 
ہجوم   یاس   کا   نقصان   کرنے   والا  ہوں 

منش شکلا