Follow by Email

Wednesday, 17 January 2018



اس  سے  ملنا     محال    تھا   اپنا 
ہجر   جیسا     وصال      تھا    اپنا 

وہ بھی رویا نہیں تھا  برسوں سے 
اس  کے  جیسا  ہی  حال   تھا اپنا 

سیدھے سیدھے  جواب  دے  دیتے 
سیدھا    سادہ     سوال    تھا  اپنا 

تیری  قربت میں آ کے  ہنستے ہیں 
ورنہ   ہم    کو    ملال    تھا   اپنا 

اس کے جاتے ہی بجھ گیا سب کچھ 
اس  کے  دم  سے  جلال  تھا  اپنا 

ہم نے جی بھر کے   چاندنی  چکھی 
اپنی   چھت   تھی    ہلال   تھا  اپنا 

بات  بھی مارکہ   کی  کہتے تھے 
اس   پہ    لہجہ    کمال    تھا  اپنا 

ہم کو  جانا تھا اب بھی میلوں تک 
جسم  تھک   کر   نڈھال   تھا  اپنا 

وہ  اندھیرے  میں  ہی  گیا  اٹھ کر 
اس    کو   اتنا    خیال   تھا   اپنا 
منیش شکلا 


Tuesday, 26 December 2017



گزاری   عمر   پیالہ  و  مے   بنانے  میں 
 پھر  ہم نے آگ لگا دی شراب  خانے  میں 

خود   اپنے  آپ کو ہم  دیکھ ہی نہیں  پاے 
ہمارا   دھیان   لگا  ہی  رہا    زمانے  میں 

سب اپنے آپ کو ڈھونڈھا کئے بہر صورت 
ہم  اپنی  داستاں  کہتے  رہے  فسانے میں 

تمھاری  یاد  ستاے گی   عمر   بھر  ہم   کو 
ذرا  سا  وقت  لگے گا  تمھیں بھلانے میں 

یوں  ایک  پل  میں زمیندوز مت کرو ہم کو 
ہزاروں  سال  لگے  ہیں  ہمیں  بنانے میں 

خود  اپنے  آپ  کے  کتنا  قریب  آ  پہنچے 
ہم  اپنے  آپ  کو  تیرے  قریب  لانے  میں 

ہماری   تشنہ    دہانی    کا    کارنامہ   ہے 
لگی  ہیں اوس کی بوندیں ندی بنانے میں 

ہماری   داستاں  کتنی  طویل   تھی  دیکھو 
تبھی  تو  دیر  لگائی  تمھیں  سنانے  میں 

منیش شکلا 

Monday, 25 December 2017



गुज़ारी  उम्र  पियाला   ओ  मय  बनाने  में। 
फिर हमने  आग  लगा  दी  शराबख़ाने में। 

ख़ुद अपने आप  को हम  देख ही नहीं पाए ,
हमारा  ध्यान  लगा   ही   रहा  ज़माने   में। 

सब  अपने  आप को  ढूंढ़ा किए बहरसूरत ,
हम  अपनी  दास्ताँ  कहते  रहे  फ़साने में। 

तुम्हारी  याद   सताएगी   उम्र  भर  हमको ,
ज़रा   सा  वक़्त   लगेगा   तुम्हें   भुलाने  में। 

यूँ  एक  पल में  ज़मींदोज़  मत करो हमको ,
हज़ारों   साल    लगे   हैं    हमें   बनाने   में। 

ख़ुद अपने आप के कितना क़रीब आ पहुंचे ,
हम  अपने  आप  को  तेरे   क़रीब  लाने  में।

हमारी   तिश्ना   दहानी    का   कारनामा   है ,
लगी   हैं   ओस  की   बूँदें   नदी   बनाने  में। 

हमारी  दास्ताँ   कितनी   तवील   थी  देखो ,
तभी   तो   देर    लगाई    तुम्हें   सुनाने   में। 
मनीष शुक्ला 


Wednesday, 15 November 2017


دل  برہم  کی  خاطر  مدّعا   کچھ   بھی  نہیں  ہوتا 
 عجب  حالت ہے اب شکوہ  گلا کچھ بھی نہیں ہوتا 

کوئی  صورت ابھرتی ہے نہ میں مسمار ہوتا ہوں 
میں  وہ پتھر کہ جسکا فیصلہ کچھ بھی نہیں ہوتا 

کسی  کو  ساتھ  لے لینا  کسی  کے ساتھ  ہو لینا 
فقیروں  کے  لئے  اچھا  برا  کچھ بھی نہیں ہوتا 

کبھی چلنا مرے  آگے  کبھی  رہنا  مرے  پیچھے  
 رہ  الفت  میں چھوٹا  یا  بڑا  کچھ بھی نہیں ہوتا 

کبھی  دل  میں مرے تیرے سوا ہر بات ہوتی ہے 
کبھی دل میں مرے تیرے سوا کچھ بھی نہیں ہوتا 

وہی  ٹوٹی  ہوئی  کشتی  وہی  پاگل  ہوائیں  ہیں 
ہمارے  ساتھ  دنیا  میں  نیا کچھ بھی نہیں ہوتا 

یہ سودا ہے نگاہوں کا تجارت دل کی ہے لیکن 
محبّت  میں  خسارہ  فایدہ  کچھ  بھی نہیں ہوتا 

کبھی  دو  چار قدموں کا سفر طے ہو  نہیں پاتا 
کبھی میلوں سے لمبا فاصلہ کچھ بھی نہیں ہوتا 

فقط   کردار  کا  مارا ہوا   ہے   ہر   بشر  ورنہ 
کوئی  انسان  اچھا  یا  برا  کچھ بھی  نہیں  ہوتا 

فلک  پر   ہی  ستاروں  کا  کوئی عنوان  ہوتا  ہے 
کسی    ٹوٹے ستارے  کا پتا  کچھ  بھی نہیں ہوتا 

بھلے خواہش کروں تیری کسی بھی شکل میں لیکن 
مرا   مقصد  پرستش  کے سوا کچھ بھی نہیں ہوتا 

اگر دیکھوں تو خامی ہی دکھائی دے ہر اک شے میں 
اگر سوچوں تو خود  سے بدنما  کچھ بھی  نہیں ہوتا 

بظاھر  عمر  بھر  یوں  تو  ہزاروں کام  کرتے ہیں 
حقیقت  میں  مگر  ہمنے  کیا کچھ  بھی  نہیں ہوتا 

منیش شکلا 


جب   آسمان   کا  سمجھے  نہیں  اشارہ   تم 

تو پھر زمیں  کو کہاں رہ  سکے  گوارا   تم 


تمہاری خلق   کا   سب   سے  حقیر ذرّہ  ہم 

ہمارے  چرخ   کا سب سے  حسیں ستارہ  تم 


اب  اس  کے  بعد  ہمیں  دید کی  نہیں حاجت 

نظر  کے  واسطے  ہو   آخری    نظارہ   تم 


بڑھا  کے  قربتیں    بیمار   کر  دیا   ہم   کو 

اب  آ کے  حال  بھی   پوچھو  کبھی ہمارا تم 


تمھاری  آگ  میں   جلتے  ہوئے  سراپا  ہم 

ہماری   راکھ  سے  اٹھتا    ہوا   شرارہ  تم 


تمھاری  بات  پہ  ہم  کو  ہنسیں سی آتی ہے 

ہمارا   حال    نہ    پوچھا   کرو   خدارا  تم 


ہمارا  ساتھ   بہت   معتبر  نہیں   پھر  بھی 

ہمارے  ساتھ  میں  کرتے  رہو  گزارہ   تم 

منیش شکلا 


فہرست

١  ایک ہی بار میں خوابوں سے  کنارا  کر کے   


٢  آہٹیں  آ   رہی     ہیں    سینے    سے     


 ٣    مخالفین    کو   حیران    کرنے  والا     ہوں 

تو  مجھ کو   سن  رہا  ہے تو   سنائی  کیوں  نہیں  دیتا  ٤ 

تو  مجھ کو   سن  رہا  ہے تو   سنائی  کیوں  نہیں  دیتا ٥ 

جینے  سے  انکار  کیا  جاتا  ہے  کیا ؟             ٦           

٧  بہلنے  لگی  ہے ذرا سی  نمی  سے  

 ٨  رات    کو   اب   بری   کیا   جاے  

 ٩  گھبرا   کر  افلاک  کی  دہشت  گردی   سے 

١٠  ہم    سفر    تو    مرا    خیال   نہ   کر 

١١  آؤ   ہم  تم   دونوں  مل کر  دنیا  کو   ٹھکراتے  ہیں 

   محبّت   کی    فراوانی    مبارک   ١٢


١٣  ہر  صلاح  دنیا  کی  درکنار  کی   ہمنے 


دل  میں  جانے   ١٩کیا  کیا  آنے  لگتا   ہے    ١٤   

   
ایک  کحرام  سا  ہر  وقت  اٹھاے   رکھیں ١٥     



 ١٦  گر    ادھر   چلے  آتے   تم  کسی  بہانے   سے



١٧  حسیں خوابوں کے بستر سے اٹھانے آ گئے شاید

١٨  ہمنے  اپنے  غم  کو   دہرایا   نہیں



 ١٦  ہر  منظر  کا  مول   چکانا  پڑتا    ہے

ہر کسی  کے سامنے  تشنلابی    کھلتی  نہیں١٧  



١٨ ہماری   بے  گناہی  کے  سبھی  اثبات  رکھے  ہیں


١٩ جب   آسمان   کا  سمجھے  نہیں  اشارہ   تم 

٢٠ جانے کس شے کے طلبگار  ہوئے  جاتے ہیں

آنکھوں   کو پر  نم   حسرت  کا  دروازہ   وا  رکھا   ہے٢١ ا


٢٢ تنی   جلدی   نہ   مان   جایا   کر

٢٣ اگر  سچ   ہو  گیئ   میری  دعا  تو

٢٤ انھیں  ہاتھوں  سے  اپنی  زندگی  کو  چھو  کے  دیکھا  تھا

دل  برہم  کی  خاطر  مدّعا   کچھ   بھی  نہیں  ہوتا ٢٥  

٢٦ دن   کا  لاوا  پیتے    پیتے   آخر   جلنے   لگتا    ہے

٢٧ بات  کہنے  کی  چھپانی  تھی  ہمیں 


٢٨ آخری   بیانوں میں  اور نہ   پیشخوانی   میں

٢٩ کام  بے  کار  کے    کئے   ہوتے


٣٠ جانے کس رنگ نے لکھا ہے مجھے


٣١ کسی کے عشق میں برباد ہونا 


٣٢ کتنی  شدّت   سے   طلب   کرتے   ہیں    ہم 

٣٣ کتنی  عجلت  میں  مٹا  ڈالا  گیا

 ٣٤ نیکی  بدی  میں  پڑ  کے  پریشان  ہو  گیا 

٣٥ روشنی  اور  رنگ کے  رقصاں سرابوں کی طرف 

٣٧ سب  کو  الجھن میں ڈال رکھا ہے


٣٨ سنجیدگی  سے  سوچنے  بیٹھا  تو  ڈر  گیا 

٣٩ تمھیں   آزاد  کرتے  ہیں   یہاں   سے

٤٠ یہ   سب  جو  ہو رہا ہے وہ تو پہلے  بھی  ہوا   تھا


٤١ اسنے     ممکن   ہے    آزمایا    ہو


٤٢ تماشا   ختم  ہو  جانے  کے  تھوڈا  بعد  آتے ہو


٤٣ سخن  بیمار  ہوتا  جا  رہا   ہے 

٤٤ پیروں   کی  من مانی  میں  ہم 

٤٥  ماضی  میں  کھلنے  والے  ہر  باب  سے  لپٹی  رہتی  ہیں


کچھ  اداسی  شام  کی  ہلکی   کرو٤٦  

٤٧ بکھرنے    کا  ارادہ   کر   رہے   ہیں 

جب  آنگن   میں  شام   اترنے   لگتی   ہے٤٨  


٤٩ کبھی  غم کبھی شادمانی کا شکوہ

٥٠ جرم  کا   انکشاف   کرنا   ہے

٥١ کئی   چہرے  سلامت   ہیں  کئی  یادیں  سلامت  ہیں

٥٢ سفینے  کو  بچانا   بھی  ضروری

٥٣ تم  اپنے  خوابوں  کے پیچھے یار مرے حیران  بہت  ہو 

تمہاری  داستانوں  کے  بہانے  لکھ  رہے  ہیں   ہم٥٤  


اس کی محفل میں جا کے لوٹ اے٥٥  

٥٦ تجھ تک آنے جانے میں ہی ٹوٹ گئے

٥٧ سوچتے    ہیں   کہ    دل   لگانے   دیں

٥٨ کسی  کردار  کے تیور کبھی  شل  ہو  نہیں  سکتے

٥٩ برہمی  کے  شور  میں  سرگوشیاں  بیکار  ہیں

٦٠ کبھی ضد   پر   اتر  آتے   کبھی   حد   سے    گزر  جاتے

٦١ کہنے    کو  رکھ    رکھاؤ   ترا   بے  مثال  ہے

٦٢ درد  دل  زخم  جگر  پر   کوئی 

٦٣ حوصلہ    اب    ناتواں    ہونے    لگا

٦٤ چاند ستارے مٹھی  میں تھے سورج سے یارانہ تھا

٦٥ غم  خوشی   اچھا  برا  سب  ٹھیک  تھا

اور      زیادہ    سنجیدہ    ہو    کر   لوٹے٦٦  

خاک    بستہ   شہاب    کتنے     تھے٦٧  

٦٨ اک خواب چھن سے ٹوٹ کے آنکھوں میں گڈ گیا

٦٩ خیالوں کا فلک احساس کے تاروں سے جڑنے میں

٧٠ کس   قدر  لا علاج  تھے  ہم   بھی 

٧١   کسی  بھی شے پہ آ جانے میں کتنی دیر لگتی  ہے

٧٢ کوئی  سمجھے تو کیا  سمجھے مرے غم کے معنی بھی

   ٧٣ کوئی   تلاش  ادھوری  سی   رہ  گیئ  مجھ  میں

٧٤ کچھ  پوشیدہ  زخم عیاں ہو سکتے  تھے 

٧٥ بنی ہے دہشتوں کی اک اندھیری  جھیل  مجھ میں 

٧٦ لغزش  کا  اعلان  کیا  ہم  دونوں  نے

٧٧  منتشر کرکے کبھی خود کو مرتب کرکے 

٧٨ پا  ب  زنجیر  تھیں  حالات  کی ماری چیخیں

٧٩ سفر   کے  ختم   کا  امکان  ہے  کیا
 
٨٠ سحر سے شام  رہتی  ہے  یہی  مشکل   مرے  آگے

سر  و سامانیوں  میں جی  رہے ہو٨١  

٨٢ سو   کردار   نبھانے  پڑتے   ہیں    ہم   کو 


صرف    بیاباں   بچتا   ہم    میں   بالکل   جنگل   ہو   جاتے٨٣  

ستاروں   کی صفوں کو تاکتے رہنا قیامت   تک٨٤  

٨٥    تمام      درد      کو     چہرے      پہ    اقتباس     کیا 


٨٦ دشت میں خاک اڑانے سے کہاں تک بچتے

٨٧ زندگی   کے  سرور  تھے   تجھ   سے

٨٨ دل   بھی  جیسے  ہمارا  کمرہ    تھا 

 
٨٩ اچانک   آج    بھلا     کیا   دکھا   انہیں   تم  میں









 

 

 








           










 
 







 



हमसफ़र ऊब चुका है मुझसे। 
रास्ता  पूछ    रहा   है  मुझसे। 

एक  नाकाम   सी   शनासाई ,
बस  यही काम हुआ है मुझसे। 

क्यूँ   मुझे  देख  रहा   है   ऐसे ?
क्या तिरा  दर्द सिवा है मुझसे ?

क्यूँ   मिरे  तौर  आज़माता है ?
तेरा  किरदार जुदा   है मुझसे। 

तू क्यूँ ज़ाहिर पे ग़ौर करता है ,
तू तो अंदर से जुड़ा है मुझसे। 

मेरे  मरते  ही  क़यामत  होगी ,
मैं ही महशर हूँ ख़ुदा है मुझसे। 

तू  फ़रामोश  कर  ख़ता मेरी ,
तेरा दरजा तो बड़ा है  मुझसे। 

उसपे रह रह के प्यार आता था ,
वो यूँ रह रह के लड़ा है मुझसे। 

मेरी क़िस्मत है कि मैं हूँ पानी ,
आग  बेकार  ख़फ़ा  है  मुझसे। 
मनीष शुक्ला