Follow by Email

Friday, 20 July 2012

فقیرانہ طبیعت تھی بہت بیباک لہجہ  تھا 
کبھی مجھمیں بھی ہنستا کھیلتا اک شخص رہتا تھا 

بگولے ہی بگولے ہیں مری ویران آنکھوں میں 
کبھی ان ریگزاروں میں کوئی دریا بھی بہت تھا 

تجھے  جب  دیکھتا ہوں تو خود اپنی یاد آتی ہے 
مرا  انداز  ہنسنے کا کبھی تیرے  ہی  جیسا  تھا 

کبھی  پرواز پر میری ہزاروں دل دھڑکتے  تھے 
دعا  کرتا   تھا کوئی تو کوئی  خشباش  کہتا  تھا 

کبھی ایسے ہی چھائی تھیں  گلابی   مجھ  پر 
کبھی پھولوں کی صحبت سے مرا دامن بھی مہکا  تھا 

میں تھا  جب کارواں کے  ساتھ تو  گلزار  تھی  دنیا  
مگر تنہا ہوا تو  ہر  طرف  صحرا  ہی  صحرا  تھا 

بس  اتنا  یاد  ہے  سویا  تھا  اک  امید  سی  لیکر 
لہو سے بھر گیی آنکھیں ن جانے خواب کیسا تھا 

منش شکلا 


Thursday, 19 July 2012

عشق کے درد کا چارہ آخر کسکے بس میں ہوت ہے
جو  پہلے  دل میں ہوتا تھا اب نس نس   میں ہوتا ہے

اڑنے  کے ارمان سبھی کے پورے کب ہو پاتے   ہیں
اڑنے   کا ارمان   اگرچہ   ہر بکس  میں   ہوتا ہے

چاند   ستاروں پر رہنے کی خواہش اچھی ہے  لیکن
چاند ستاروں پر رہ پانا کس کے بس میں   ہوتا ہے

ایک   ارادہ کرکے گھر سے چلنے میں ہے دانائی
لوگوں   کا نقصان ہمیش پیش و پس   میں ہوتا ہے

پیار کی   پہلی بارش میں  بھی ہے بلکل ویسا جادو
جیسا جادو بھینی بھینی  مشک خس  میں  ہوتا  ہے

اس سے باتیں کرنے میں سب خوف ہوا ہو جاتے ہیں
کس   درجہ پرزور  دلاسا   اک ڈھارس میں ہوتا ہے

میرے  جیسا    لوہا  آخر    سونے   میں  تبدیل   ہوا
تجھ میں شاید وو سب کچھ ہے جو پراس میں ہوتا ہے

منش شکلا








کسی کے عشق میں برباد ہونا 
ہمیں   آیا   نہیں   فرہاد    ہونا 

محبّت   کا سبق آساں لگے ہے 
بہت   مشکل ہے لیکن یاد ہونا 

بہت پیاری ہے آزادی کی چاہت 
مگر   اچھا    نہیں  آزاد    ہونا 

ہمیں اشکوں سے نسبت ہو گی ہے 
نہیں  ممکن   ہمارا   شاد   ہونا 

وہاں بھی پھوٹ کر رونا پڑا ہے 
جہاں  ممکن  ن تھا  ناشاد  ہونا 

کئی   باتیں   بھلا  دینا  ہی بہتر 
ضروری تو نہیں سب یاد ہونا 

کوئی تعمیر کی صورت تو نکلے 
ہمیں  منظو ر ہے   بنیاد   ہونا 

بناتا  ہے سفر کو  خوبصورت 
مسافت  کی  کوئی  میعاد  ہونا 
منش شکلا