Follow by Email

Friday, 27 June 2014



جانے کس شے کے طلبگار  ہوئے  جاتے ہیں
کھیل  ہی  کھیل  میں بیمار  ہوئے   جاتے  ہیں

قافلہ   درد  کا    چہرے  سے   گزر   جاتا   ہے
ضبط   کرتے  ہیں تو  اظہار  ہوئے  جاتے  ہیں

کون سے خواب سجا بیٹھے ہیں ان آنکھوں میں
 کن  امیدو  ں  کے   گرفتار   ہوئے   جاتے   ہیں

دن    گزرتا   ہے  عبث   رات   گزر   جاتی   ہے
رفتہ  رفتہ   یوں   ہی   بیکار  ہوئے  جاتے  ہیں

راستے    جو   کبھی   ہموار   نظر   آتے   تھے
دیکھتے   دیکھتے  د شوار  ہوئے  جاتے   ہیں

توبہ  کرنا  جو  ضروری  ہے  عبادت  کے   لئے
تو    خطا   کرکے   گنہگار   ہوئے   جاتے   ہیں

جتنا   کھولتے  ہ یں  ادھر  اتنی  گرہ  پڑتی   ہے
ہم  کہ   ہر  روز   طرحدار    ہوئے   جاتے   ہیں

کوئی  گھٹتا  ہی  چلا  جائے  ہے  پیہم  ہم   میں
اپنے  اوپر    ہی   گرانبار   ہوئے    جاتے   ہیں

منش شکلا


           تمام      درد      کو     چہرے      پہ    اقتباس     کیا           کہ   اک   ہنسی   نے  ہر  اک  غم  کو بے لباس   کیا

            تمہارا    حوصلہ   رکھنے   کو    ہنس    دئے    ورنہ             تمھاری    بات      نے     ہمکو    سوا     اداس    کیا 

            نہ   راستے     کی   خبر   ہی     رہی   نہ    منزل   کی
             سفر   کے    شوق   نے   کس    درجہ   بدحواس   کیا 

            جہاں  سے ا ٹھ  کے  چلے  تھے   جہاں   نوردی   کو
             سفر     تمام     اسی     در     کے    آس     پاس   کیا 

            فقط  خوشی  سے  ہی   واقف  تھی  ناسمجھ  اب  تک             نظر   کو     کتنی     مشقّت    سے    غم  شناس   کیا 

            وہ جسکو کہکے  کوئی بھول  بھی گیا کب   کا 
              تمام    عمر    اس  اک     بات    کا   ہی     پاس    کیا 

            ہر  ایک    شے    کی   ضرورت  پڑی    کہانی   میں
              کبھی   خوشی  تو   کبھی   غم   سے     التماس    کیا
منش شکلا