Follow by Email

Friday, 27 June 2014


تمام    درد   کو   چہرے   پہ    اقتباس    کیا 

کہ اک  ہنسی  نے ہر اک غم کو بےلباس  کیا


تمہارا  حوصلہ رکھنے کو  ہنس  دئے   ورنہ 

تمھاری   بات   نے  ہمکو  سوا   اداس   کیا 


نہ راستے   کی خبر ہی    رہی  نہ  منزل  کی
سفر کے  شوق نے کس  درجہ  بدحواس  کیا 


جہاں سے اٹھ کے چلے تھے جہاں نوردی کو
سفر   تمام   اسی    در   کے  آس   پاس  کیا 


فقط خوشی  سے ہی  واقف تھی ناسمجھ اب تک

نظر  کو   کتنی  مشقّت   سے  غم شناس   کیا 


 وہ جسکو کہکے کوئی بھول بھی گیا کب   کا
تمام   عمر   اس اک   بات   کا  ہی   پاس    کیا 


ہر ایک شے  کی  ضرورت پڑی    کہانی  میں
کبھی خوشی تو  کبھی  غم  سے  التماس  کیا
منش شکلا 

No comments:

Post a Comment