Follow by Email

Wednesday, 19 April 2017


کیا  اس  نے  کہا  ہوگا  کیا  تم نے  سنا   ہوگا 
اس   بار   بھی    قصّہ گو   مایوس  ہوا  ہوگا 


  کیسا   بھی   فسانہ    ہو  آخر  کو  فسانہ   تھا 
  کچھ  بھول  گئے   ہوگے   کچھ  یاد  رہا   ہوگا 

  اس   بار  بھی  عجلت  میں  تم ہم سے گزر آے 
  جو  باب  ضروری   تھا   اسے  چھوڈ دیا  ہوگا 

  اس  بار   بھی  منزل  پر اک  ٹیس  اٹھی   ہوگی 
   اس  با ر  بھی رستے  نے  خوش باش کہا  ہوگا 

   دنیا  کے مسایل  تو سلجھے  ہیں  نہ سلجھینگے 
    ہم   جان   گئے   تم   سے  وعدہ  نہ  وفا  ہوگا 

    گر   زخم    کریدوگے    کچھ   ہاتھ   نہ   آے گا 
     ہم  بھول   چکے   جس  کو  وہ  درد  سوا  ہوگا 

      ہم  لوگ   بظاھر   تو   سر تا پا    سلامت     ہیں 
      ممکن   ہے  کہ  اندر  سے   کچھ  ٹوٹ  گیا  ہوگا 

       اس  بار  بھی   ملنے  پر  خاموش   رہینگے   ہم 
       اس  بار  بھی  رخصت  پر  اک   شور   بپا   ہوگا 

      اس  بار  بھی  سینے  میں  ہر  بات  چھپا  لینگے 
        اس   بار  بھی  ہونتھوں  پر  اک  لفظ   دعا   ہوگا 
منیش شکلا 

Tuesday, 11 April 2017

زندگی  کے  سرور  تھے  تجھ  سے



اپنے سارے غرور تھے تھوجھ  سے


تو  ابھی   حافظے   میں  باقی    ہے

کچھ  مراسم  ضرور  تھے  تجھ  سے


  اب   فلک  ماند   پڑ   گیا    شب    کا 

   چاند تاروں کے نور  تھے  تجھ   سے


  اب     فقط      خیریت    مسلّط     ہے

  دل  میں  کفر  و شرور  تھے  تجھ سے 


تیرے   کتنا     قریب    بیٹھے    تھے

پھر بھی کس  درجہ دور تھے تجھ سے


اب    کہاں    شاعری    میسّر     ہے

ایسے  سارے  فتور   تھے  تجھ سے


کیا   ہوا   پھر    ہمیں   نہیں   معلوم

ہم  تو ٹکرا کے  چور تھے تجھ  سے


اب    تو    دیوانہ وار   ہنستے   ہیں

سارے   علم   و شعور تھے تجھ سے

منیش شکلا

Monday, 10 April 2017



ज़िन्दगी   के   सुरूर   थे   तुझसे। 
अपने    सारे    ग़ुरूर   थे   तुझसे। 

तू   अभी    हाफ़िज़े   में  बाक़ी  है,
कुछ   मरासिम  ज़रूर  थे  तुझसे। 

अब   तो  बे  साख़्ता  बिलखते हैं ,
सारे  ज़ब्त  ओ  सुबूर  थे  तुझसे। 

तेरे    कितना    क़रीब    बैठे   थे ,
फिर भी किस दरजा दूर थे तुझसे। 

अब   कहाँ   शायरी   मयस्सर  है ,
ऐसे   सारे    फ़ितूर    थे   तुझसे। 

क्या  हुआ  फिर हमें  नहीं मालूम ,
हम  तो  टकरा  के  चूर थे तुझसे। 

अब   तो   दीवानावार   हँसते  हैं ,
सारे  इल्म  ओ  शऊर  थे  तुझसे। 
मनीष शुक्ला 

Monday, 3 April 2017



غم خوشی اچھا برا سب ٹھیک تھا
زندگی میں جو ہوا سب ٹھیک تھا

آج ویرانے میں آکر یہ لگا
شور و غل موج بلا سب ٹھیک تھا

زندگی جیسی بھی تھی اچھی رہی
بے سبب جو کچھ کیا سب ٹھیک تھا

اب خلا میں آ کے اندازہ ہوا
آندھیاں باد صبا سب ٹھیک تھا

اب کہانی سے نکل کر یہ لگا
ابتدا تا انتہا سب ٹھیک تھا

وہ سفینہ وہ سمندر وہ ہوا
وہ ابرنا ڈوبنا سب ٹھیک تھک

کم سے کم ساتھی فراہم تھا کوئی
بے وفا یا با وفا سب ٹھیک تھا
منیش شکلا 





सबको   उलझन  में   डाल  रखा  है। 
हमने    सिक्का   उछाल   रखा   है। 

ख़ुद   को  इक  बार  फिर  बनाएंगे ,
हमने   सब  कुछ  संभाल  रखा  है। 

हमने   हर  लब   टटोल  कर  देखा ,
सब   पे   रंज  ओ  मलाल  रखा है। 

हम    तहीदस्तियों   से  वाक़िफ़  हैं ,
हमने    ख़ुद    को  खंगाल रखा  है। 

चंद     चेहरे     कमाल     होते    हैं ,
उसका   चेहरा   मिसाल   रखा   है। 

हुस्न   तो   हुस्न  पाकपरवर     ने ,
रुख़   पे   कैसा   जलाल   रखा   है। 

आजकल  हमने  अपनी महफ़िल से ,
ख़ुद   को   बाहर  निकाल  र खा है। 
मनीष शुक्ला 



سب  کو  الجھن میں ڈال رکھا ہے
  ہم   نے سکّہ   اچھال  رکھا  ہے  

خود  کو  اک   بار  پھر  بناینگے 
ہم نے سب کچھ سنبھال رکھا  ہے 

 ہم   نے  ہر  لب ٹٹول کر  دیکھا  
سب  پہ  رنج  و  ملال  رکھا  ہے 

ہم  تھیدستیوں  سے  واقف  ہیں 
ہم نے خود کو  کھنگال  رکھا ہے 

چند   چہرے   کمال   ہوتے  ہیں 
اس  کا   چہرہ   مثال   رکھا  ہے 

حسن  تو  حسن  پاک  پرور  نے 
رخ  پہ   کیسا   جلال   رکھا  ہے 

آجکل  ہم  نے   اپنی  محفل  سے 
خود  کو   باہر   نکال   رکھا  ہے 
منیش شکلا 



लग़्ज़िश  का  ऐलान   किया  हम दोनों ने। 
जुर्म  अज़ीमुश्शान   किया  हम  दोनों  ने। 

इक   दूजे  को  आख़िर   हासिल  कर  बैठे ,
ख़ुद   अपना  नुक़सान  किया हम दोनों ने। 

पहले  सन्नाटों  की   महफ़िल  लगती  थी ,
सहरा   को  वीरान   किया  हम  दोनों   ने। 

दुनिया  जिस रस्ते को मुश्किल कहती थी ,
वो  रस्ता  आसान  किया   हम  दोनों  ने। 

लोग   हमें  अग़यार   समझते  थे   शायद ,
लोगों   को  हैरान   किया    हम  दोनों  ने। 

इश्क़  का  फन्दा  डाल  लिया  है  गर्दन में ,
फांसी  का  सामान    किया  हम  दोनों  ने। 

क़ुरबानी   का  मतलब  भी  मालूम  न  था ,
ख़ुद  को  जब  क़ुर्बान  किया  हम दोनों ने। 

दानाई    से    इश्क़    कहाँ    हो   पाता   है,
ख़ुद  को  कुछ  नादान  किया  हम दोनों ने। 

इक   दूजे  को  इक  लम्हे  में  तोल   लिया ,
आँखों  को   मीज़ान   किया  हम  दोनों  ने। 

होंठों  को  इक   नई   कहानी   बख़्श   गए ,
दुनिया  पर  एहसान  किया   हम  दोनों  ने। 
मनीष शुक्ला 


لغزش  کا  اعلان  کیا  ہم  دونوں  نے 
جرم  عظیم ا لشان  کیا  ہم  دونوں نے 

اک  دوجے کو آخر  حاصل کر  بیٹھے 
خود  اپنا  نقصان  کیا  ہم  دونوں  نے 

پہلے  سنّاٹوں  کی  محفل  لگتی  تھی 
صحرا  کو  ویران  کیا  ہم  دونوں  نے 

دنیا  جس رستے  کو مشکل کہتی تھی 
وہ  رستہ  آسان   کیا  ہم  دونوں  نے 

لوگ  ہمیں  اغیار سمجھتے تھے شاید 
لوگوں  کو  حیران  کیا  ہم  دونوں  نے 

عشق  کا  پھندا  ڈال  لیا ہے گردن میں 
پھانسی  کا  سامان  کیا  ہم  دونوں نے 

قربانی  کا  مطلب  بھی  معلوم  نہ  تھا 
خود کو  جب  قربان  کیا  ہم  دونوں نے 

دانائی  سے  عشق  کہاں  ہو  پاتا  ہے 
خود  کو  کچھ  نادان کیا  ہم دونوں  نے 

اک  دوجے  کو   اک لمحے میں تول لیا 
آنکھوں  کو  میزان  کیا  ہم  دونوں  نے 

ہونٹھوں  کو  اک  نئی  کہانی  بخش گئے 
دنیا   پر   احسان   کیا   ہم   دونوں  نے 
منیش شکلا 


زندگی  سے  پیار کر بیٹھے تھے ہم 
ہاں  کبھی  اقرار  کر بیٹھے تھے ہم 

پھر  سفر  کا   لطف   ہی   جاتا   رہا 
راستہ  ہموار  کر  بیٹھے   تھے    ہم

بے  جھجھک   اقرار  کرنا  تھا  جہاں 
بے  سبب انکار کر  بیٹھے  تھے  ہم 

جسم   ہی  کی  پرسشیں  کرتے  رہے 
روح کو بے بیکار کر بیٹھے تھے  ہم 

لذّتیں    جاتی     رہیں    تعبیر    کی 
خواب  کو  بازار  کر  بیٹھے تھے  ہم 

پھر   ہمارا   دن    بہت    برہم    رہا 
رات  کو  بیزار  کر  بیٹھے  تھے  ہم 


ہم  کو  جنّت  سے  نکالا  کیوں  گیا ؟
 عشق  کا  اظہار   کر  بیٹھے  تھے ہم 
منیش شکلا 

Sunday, 2 April 2017



جب   آفتاب    مری    دھجیاں    اڈا    دیگا 
تب  آ کے چاند  مجھے  چاندنی اڑھا   دیگا 

میں پھر زمیں کی نصیحت کو بھول  جاؤنگا 
ہوا کے دوش پہ مجھ کو وہ پھر چڈھا  دیگا 

میں   رو کے اور اسے مطمین   کر  دونگا 
وہ  ہنس کے اور مرے  درد کو  بڑھا  دیگا 

یہ جو وجود کے دھبّے ہیں ان کا کیا  ہوگا ؟
 ردا  کے  داغ   تو   مانا  کوئی  چھڈا  دیگا 

پھر اس کے بعد اسی کی زباں میں  بولوگے 
وہ  چند  روز میں سارے سبق  پڑھا  دیگا 

زباں کو بیندھ کے رکھ دیگا ایک لمحے میں 
نظر  کا  تیر  وہ  چہرے  پہ  جب  گڑا  دیگا 
 منیش شکلا 

Saturday, 1 April 2017



آخری بیانوں میں اور نہ پیشخوانی میں
ہم کہیں نہیں آتے آپ کی کہانی میں

اخللات کرنوں کا اوپری دکھاوا تھا
سبز ہو گئے سارے رنگ گہرے پانی میں

ان سے تم اکیلے میں گفتگو کیا کرنا
لفظ دے کے جاینگے ہم تمھیں نشانی میں

آج وہ پری چہرہ بات کر گیا ہم سے
نام تک نہیں پوچھا ہم نے شاد مانی میں

اک دفع گئے تو پھر لوٹ کر نہیں آیے
چوک ہو گی ہم سے اپنی میزبانی میں

تم ذرا سے زخموں سے تلملاہے بیٹھے ہو
سر کٹا ے بیٹھے ہیں لوگ حق بیانی میں
منیش شکلا



زندگی  کے  سرور  تھے  تجھ  سے 
اپنے سارے غرور تھے تھوجھ  سے 

تو  ابھی   حافظے   میں  باقی   ہے 
کچھ  مراسم  ضرور  تھے  تجھ سے 

اب   تو   بے  ساختہ   بلاکھتے  ہیں 
سارے ضبط  و صبور تھے تجھ  سے 

تیرے   کتنا     قریب    بیٹھے   تھے 
پھر بھی کس درجہ دور تھے تجھ سے 

اب    کہاں    شاعری    میسّر     ہے 
ایسے  سارے  فتور   تھے  تجھ سے 

کیا   ہوا   پھر    ہمیں   نہیں   معلوم 
ہم  تو ٹکرا کے  چور تھے تجھ  سے 

اب    تو    دیوانہ وار   ہنستے   ہیں 
سارے   علم   و شعور تھے تجھ سے 
منیش شکلا 



وقت پیغام کا نہیں شاید
اب مرض نام کا نہیں شاید

اس کا چاہا نہ کچھ ہوا اب تک
دل کسی کام کا نہیں شاید

اب صحیفے زمیں سے اگتے ہیں
دور الہام کا نہیں شاید

بات اٹکی ہے آ کے صحبت پر
مسلہ شام کا نہیں شاید

خامشی کی طناب ٹوٹی ہے
شور کہرام کا نہیں شاید

عشق کرنا تباہ ہو جانا
کام انعام کا نہیں شاید





ایک  تو  عشق  خود   مصیبت  ہے 
اس  پہ  ہم  کو  وفا  کی عادت  ہے 

اب  بھی  خوابوں میں اس کا آ جانا 
جانے  کس   بات   کی  علامت  ہے 

آپ    کے  تیوروں   سے  لگتا  ہے  
آپ  کی   آپ   سے   عداوت    ہے 

آپ    پر     گالیاں    نہیں    پہبتیں 
آپ    کا    کام    تو   محبّت    ہے 

یہ جو سختی سے ہونٹھ بھینچے ہیں 
کچھ   اشارہ   ہے   یا    ہدایت   ہے 

آپ     سے    عاشقی    نہیں   ہوگی 
آپ     کا     مشغلہ     شرافت    ہے 

آہ    بھرتے   ہیں   چیخ  لیتے  ہیں 
آجکل     درد     کی     عنایت    ہے 
منیش شکلا 


کسی کو غم نے کسی کو خوشی نے توڈ  دیا 
مجھے  تو  جس  نے بنایا اسی نے توڈ  دیا 

میں  بھی  بیباک  تکلّم  پہ  یقیں  رکھتا  تھا 
مجھے  بھی  شہر کی  طعنہ زنی نے توڈ دیا 

ترا  بھی  ضبط  مرے   آنسوں  میں  بہ نکلا 
مرا بھی صبر  تری  بے  بسی  نے  توڈ  دیا 

جگہ   جگہ   پہ    دراریں   پڑیں  تکبّر   پر 
مری  انا   کا   قلعہ  عاشقی   نے  توڈ   دیا 

اسی  کے  زعم  پہ  ہستی کو دللگی  سمجھا 
مرا   غرور   اسی   زندگی   نے   توڈ   دیا 

عبث  شراب  پہ  الزام  رکھ  رہے ہیں  لوگ 
مرا  نشہ  تو  تری  بے  رخی  نے توڈ دیا 

مرے   ملال کو اب رو کے اور سوا مت  کر 
مرا  بھرم  تو  تری  اک  ہنسی نے توڈ دیا 

حدود  زیست  سے  باہر  نکل  گئے  پیاسے
طلب   کا  دائرہ   تشنہ   لبی  نے  توڈ  دیا 

اب  اپنا  دھیان  کسی  چیز  میں نہیں  لگتا 
ہمارا  دھیان  تو  کب  کا کسی نے توڈ  دیا 
منیش شکلا