Follow by Email

Monday, 3 April 2017



زندگی  سے  پیار کر بیٹھے تھے ہم 
ہاں  کبھی  اقرار  کر بیٹھے تھے ہم 

پھر  سفر  کا   لطف   ہی   جاتا   رہا 
راستہ  ہموار  کر  بیٹھے   تھے    ہم

بے  جھجھک   اقرار  کرنا  تھا  جہاں 
بے  سبب انکار کر  بیٹھے  تھے  ہم 

جسم   ہی  کی  پرسشیں  کرتے  رہے 
روح کو بے بیکار کر بیٹھے تھے  ہم 

لذّتیں    جاتی     رہیں    تعبیر    کی 
خواب  کو  بازار  کر  بیٹھے تھے  ہم 

پھر   ہمارا   دن    بہت    برہم    رہا 
رات  کو  بیزار  کر  بیٹھے  تھے  ہم 


ہم  کو  جنّت  سے  نکالا  کیوں  گیا ؟
 عشق  کا  اظہار   کر  بیٹھے  تھے ہم 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment