Follow by Email

Monday, 3 April 2017



غم  خوشی   اچھا  برا  سب  ٹھیک  تھا
زندگی  میں  جو  ہوا  سب   ٹھیک   تھا

آج    ویرانے   میں    آکر   یہ     لگا
شور و غل  موج  بلا  سب  ٹھیک   تھا

زندگی  جیسی  بھی  تھی   اچھی   رہی
بے  سبب  جو کچھ کیا سب ٹھیک  تھا

اب   خلا   میں   آ کے    اندازہ     ہوا
آندھیاں   باد   صبا   سب   ٹھیک   تھا

اب    کہانی   سے  نکل  کر   یہ   لگا
ابتدہ    تا    انتہا   سب    ٹھیک    تھا

وہ    سفینہ   وہ   سمندر   وہ     ہوا
وہ  ابرنا   ڈوبنا   سب    ٹھیک  تھک

کم  سے  کم  ساتھی میسّر  تھا   کوئی
بے   وفا  یا  با وفا  سب  ٹھیک   تھا
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment