Follow by Email

Wednesday, 19 April 2017


کیا  اس  نے  کہا  ہوگا  کیا  تم نے  سنا   ہوگا 
اس   بار   بھی    قصّہ گو   مایوس  ہوا  ہوگا 


  کیسا   بھی   فسانہ    ہو  آخر  تو   فسانہ   تھا 
  کچھ  بھول  گئے   ہوگے   کچھ  یاد  رہا    ہوگا 

  اس   بار  بھی  عجلت  میں  تم ہم سے گزر آے 
  جو  باب  ضروری   تھا   اسے  چھوڈ دیا  ہوگا 

  اس  بار   بھی  منزل  پر اک  ٹیس  اٹھی   ہوگی 
   اس  با ر  بھی رستے  نے  خوش باش کہا  ہوگا 

   دنیا  کے مسایل  تو سلجھے  ہیں  نہ سلجھینگے 
    ہم   جان   گئے   تم   سے  وعدہ  نہ  وفا  ہوگا 

    گر   زخم    کریدوگے    کچھ   ہاتھ   نہ   آے گا 
     ہم  بھول   چکے   جس  کو  وہ  درد  سوا  ہوگا 

      ہم  لوگ   بظاھر   تو   سر تا پا    سلامت     ہیں 
      ممکن   ہے  کہ  اندر  سے   کچھ  ٹوٹ  گیا  ہوگا 

       اس  بار  بھی   ملنے  پر  خاموش   رہینگے   ہم 
       اس  بار  بھی  رخصت  پر  اک   شور   بپا   ہوگا 

      اس  بار  بھی  سینے  میں  ہر  بات  چھپا  لینگے 
        اس   بار  بھی  ہونتھوں  پر  اک  لفظ   دعا   ہوگا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment