Follow by Email

Saturday, 1 April 2017



 کسی  کو غم نے  کسی کو  خوشی نے  توڈ  دیا 
 ہمیں   تو   جس  نے  بنایا  اسی نے  توڈ   دیا 

  ہم   بھی  بیباک   تکلّم  پہ   یقیں  رکھتے تھے  
 ہمیں   بھی  شہر  کی  طعنہ زنی  نے   توڈ دیا 

 ترا   بھی   ضبط  مرے   آنسوں  میں  بہ  نکلا 
 مرا  بھی  صبر  تری  بے  بسی  نے   توڈ  دیا 

 جگہ   جگہ    پہ   دراریں    پڑیں   تکبّر   پر 
  مری  انا   کا   قلعہ  عاشقی    نے   توڈ   دیا 

  اسی  کے   زعم   پہ  ہستی  کو دللگی  سمجھا 
  مرا    غرور   اسی    زندگی   نے   توڈ   دیا 

  عبث   شراب   پہ   الزام   رکھ  رہے ہیں  لوگ 
   مرا  نشہ   تو  تری   بے  رخی   نے توڈ   دیا 

  مرے    ملال  کو  اب  رو کے اور سوا مت  کر 
   مرا   بھرم  تو  تری  اک  ہنسی  نے  توڈ  دیا 

  حدود   زیست   سے  باہر   نکل  گئے   پیاسے
    طلب    کا  دائرہ    تشنہ   لبی   نے   توڈ   دیا 

   اب   اپنا   دھیان   کسی   چیز  میں  نہیں  لگتا 
   ہمارا   دھیان   تو  کب  کا  کسی  نے  توڈ  دیا 
منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment