Follow by Email

Saturday, 1 April 2017




وقت   پیغام    کا     نہیں   شاید
اب  مرض  نام  کا    نہیں   شاید

اس  کا  چاہا نہ کچھ  ہوا اب تک
دل   کسی   کام   کا  نہیں   شاید

اب صحیفے زمیں سے اگتے ہیں
دور    الہام    کا    نہیں    شاید

  اترا     اترا      سیاہ      افسردہ 
 رنگ   یہ   شام   کا   نہیں  شاید 

خامشی   کی     طناب   ٹوٹی ہے
شور    کہرام    کا   نہیں    شاید

 عشق    کرنا    تباہ    ہو     جانا
کام     انعام    کا     نہیں    شاید



No comments:

Post a Comment