Follow by Email

Monday, 3 April 2017




سب  کو  الجھن میں ڈال رکھا ہے
  ہم   نے سکّہ   اچھال  رکھا  ہے  

خود  کو  اک   بار  پھر  بناینگے 
ہم نے سب کچھ سنبھال رکھا  ہے 

 ہم   نے  ہر  لب ٹٹول کر  دیکھا  
سب  پہ  رنج  و  ملال  رکھا  ہے 

ہم  تھیدستیوں  سے  واقف  ہیں 
ہم نے خود کو  کھنگال  رکھا ہے 

چند   چہرے   کمال   ہوتے  ہیں 
اس  کا   چہرہ   مثال   رکھا  ہے 

حسن  تو  حسن  پاک  پرور  نے 
رخ  پہ   کیسا   جلال   رکھا  ہے 

آجکل  ہم  نے   اپنی  محفل  سے 
خود  کو   باہر   نکال   رکھا  ہے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment