Follow by Email

Tuesday, 11 April 2017

زندگی  کے  سرور  تھے  تجھ  سے



اپنے سارے غرور تھے تھوجھ  سے


تو  ابھی   حافظے   میں  باقی    ہے

کچھ  مراسم  ضرور  تھے  تجھ  سے


  اب   فلک  ماند   پڑ   گیا    شب    کا 

   چاند تاروں کے نور  تھے  تجھ   سے


  اب     فقط      خیریت    مسلّط     ہے

  دل  میں  کفر  و شرور  تھے  تجھ سے 


تیرے   کتنا     قریب    بیٹھے    تھے

پھر بھی کس  درجہ دور تھے تجھ سے


اب    کہاں    شاعری    میسّر     ہے

ایسے  سارے  فتور   تھے  تجھ سے


کیا   ہوا   پھر    ہمیں   نہیں   معلوم

ہم  تو ٹکرا کے  چور تھے تجھ  سے


اب    تو    دیوانہ وار   ہنستے   ہیں

سارے   علم   و شعور تھے تجھ سے

منیش شکلا

No comments:

Post a Comment