Follow by Email

Saturday, 1 April 2017



ایک  تو  عشق  خود   مصیبت  ہے 
اس  پہ  ہم  کو  وفا  کی عادت  ہے 

اب  بھی  خوابوں میں اس کا آ جانا 
جانے  کس   بات   کی  علامت  ہے 

آپ    کے  تیوروں   سے  لگتا  ہے  
آپ  کی   آپ   سے   عداوت    ہے 

آپ    پر     گالیاں    نہیں    پہبتیں 
آپ    کا    کام    تو   محبّت    ہے 

یہ جو سختی سے ہونٹھ بھینچے ہیں 
کچھ   اشارہ   ہے   یا    ہدایت   ہے 

آپ     سے    عاشقی    نہیں   ہوگی 
آپ     کا     مشغلہ     شرافت    ہے 

آہ    بھرتے   ہیں   چیخ  لیتے  ہیں 
آجکل     درد     کی     عنایت    ہے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment