Follow by Email

Friday, 22 April 2016



جانے کس رنگ نے لکھا ہے مجھے 
ہر کوئی  صاف  دیکھتا  ہے  مجھے 

کوئی    بیٹھا    ہوا   ستاروں    میں 
عرش  کی  سمت کھینچتا ہے مجھے 

تیرے    ہونٹوں  پہ  کیوں  نہیں  آتا 
تیرے  چہرے  پہ جو دکھا ہے مجھے  

میں   جسے   راستہ    دکھاتا   تھا 
طاق  پر  وہ  ہی رکھ گیا  ہے  مجھے 

میں  نے  اس  پار   جھانکنا   چاہا 
آسماں  ساتھ  لے  گرا  ہے   مجھے 

میں  نے  آنکھیں  نچوڈ  کر رکھ دیں 
اب  کہاں  خواب سوجھتا ہے  مجھے 

ایک     چہرہ     ہی   ہو    گیا    مبہم 
اور  سب   کچھ   تو  یاد  سا    مجھے 

ہر      سحر      تیرگی     لئے    اے 
جانے  کس  شب  کی بددعا ہے مجھے 

میرا     سارا     بدن     پسیج      گیا 
بھیگی نظروں سے کیوں چھوا ہے مجھے 

منش شکلا 

Wednesday, 13 April 2016


        غزل 


          حسیں خوابوں کے بستر سے اٹھانے آ گئے شاید 
          نے   سورج  مری  نیندیں  اڑانے  آ گئے    شاید 

          بہت  مایوس  نظروں سے ہماری اور  تکتی  ہے 
          سفیران  سحر   شب   کو   بلانے  آ گئے    شاید 

           کہانی  اک  نے عنوان  پہ   آنے  ہی   والی   تھی 
           مگر   پھر  بیچ  میں  قصّے  پرانے  آ گئے   شاید 

           لبوں پر مسکراہٹ ٹانک لیتے ہیں  سلیقے   سے 
           ہمیں   بھی  درد کے رشتے نبھانے آ گئے   شاید 

           ہمارا درد آسکوں میں نہیں شعروں میں ڈھلتا ہے 
           ہمیں  بھی  ٹھیک سے آنسو بہانے آ گئے   شاید 

           ہماری  وحشتیں حد سے  زیادہ  بڑھ   گئں   آخر 
            ہمارے  رقص  کرنے  کے  زمانے  آ گئے   شاید 

            ہمارا  نام لے لیکر پکارے ہے  ہر اک شے   کو 
            سنا  ہے ہوش منزل  کے ٹھکانے  آ گئے   شاید 

منش شکلا