Follow by Email

Wednesday, 13 April 2016


        غزل 


          حسیں خوابوں کے بستر سے اٹھانے آ گئے شاید 
          نے   سورج  مری  نیندیں  اڑانے  آ گئے    شاید 

          بہت  مایوس  نظروں سے ہماری اور  تکتی  ہے 
          سفیران  سحر   شب   کو   بلانے  آ گئے    شاید 

           کہانی  اک  نے عنوان  پہ   آنے  ہی   والی   تھی 
           مگر   پھر  بیچ  میں  قصّے  پرانے  آ گئے   شاید 

           لبوں پر مسکراہٹ ٹانک لیتے ہیں  سلیقے   سے 
           ہمیں   بھی  درد کے رشتے نبھانے آ گئے   شاید 

           ہمارا درد آسکوں میں نہیں شعروں میں ڈھلتا ہے 
           ہمیں  بھی  ٹھیک سے آنسو بہانے آ گئے   شاید 

           ہماری  وحشتیں حد سے  زیادہ  بڑھ   گئں   آخر 
            ہمارے  رقص  کرنے  کے  زمانے  آ گئے   شاید 

            ہمارا  نام لے لیکر پکارے ہے  ہر اک شے   کو 
            سنا  ہے ہوش منزل  کے ٹھکانے  آ گئے   شاید 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment