Follow by Email

Friday, 31 March 2017




جب  آسمان  کا  سمجھے  نہیں  اشارہ  تم 
تو پھر زمیں کو کہاں رہ  سکے  گوارا  تم 

تمھارے  دیر  کا   سب  سے  حقیر ذرّہ  ہم 
ہمارے  چرخ  کا سب سے حسیں ستارہ  تم 

اب  اس  کے  بعد  ہمیں دید کی نہیں حاجت 
نظر  کے  واسطے  ہو   آخری   نظارہ  تم 

بڑھا  کے  قربتیں   بیمار  کر  دیا   ہم   کو 
اب  آ کے  حال  بھی  پوچھو کبھی ہمارا تم 

تمھاری  آگ  میں  جلتے  ہوئے  سراپا  ہم 
ہماری  راکھ   میں   سویا   ہوا   شرارہ  تم 

تمھاری  بات  پہ  ہم  کو  ہنسیں سی آتی ہے 
ہمارا   حال    نہ    پوچھا   کرو   خدارا  تم 

ہمارے  ساتھ  سے  تم  مطمئیں   نہیں لگتے 
ہمارے  ساتھ  میں  کرتے  تو  ہو گزارہ   تم 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment