Follow by Email

Wednesday, 1 March 2017



جرم    عظیم ا لشان    کیا   ہم   دونوں   نے
چاہت     کا   اعلان    کیا   ہم   دونوں    نے 

اک   دوجے   کو  آخر   حاصل  کر    بیٹھے 
خود   اپنا   نقصان   کیا   ہم    دونوں    نے 

دنیا  جس  رستے   کو  مشکل   کہتی  تھی 
وہ   رستہ   آسان    کی  ا ہم   دونوں   نے 

پہلے  سنّاٹوں    کی    محفل   لگتی    تھی 
صحرا    کو   ویران   کیا  ہم    دونوں   نے 

لوگ ہمیں بس دوست سمجھتے تھے شاید 
لوگوں   کو   حیران   کیا   ہم دونوں   نے 

عشق   کا   پھندا   ڈال   لیا  ہے گردن  میں 
پھانسی  کا   سامان   کیا   ہم   دونوں   نے 

قربانی    کا   مطلب   بھی   معلوم   نہ  تھا 
خود  کو  جب   قربان   کیا  ہم   دونوں   نے 

دانائ    سے   عشق    کہاں    ہو  پاتا   ہے 
خود  کو  کچھ  ناداں   کیا   ہم   دونوں   نے 

اک   دوجے   کو   تول  لیا ا ک لمحے میں 
آنکھوں   کو  میزان   کیا   ہم   دونوں   نے 

ہونٹوں    کو  اک  نئ ی کہانی بخش  گئے 
دنیا  پر   احسان     کیا   ہم    دونوں   نے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment