Follow by Email

Tuesday, 28 March 2017



آنکھوں   کو پر  نم   حسرت  کا  دروازہ   وا  رکھا   ہے
 اپنے   ٹوٹے  خواب  کو  ہم  نے  اب  تک  زندہرکھا ہے 



   عشق  کیا  تو  ٹوٹ  کے جی بھر نفرت کی تو شدّت سے 

  اپنے   ہر   کردار  کا   چہرہ   ہم   نے  اجلا   رکھا   ہے 



   جو آیا  بازار  میں  وہ  بس  جانچ  پرکھ  کر  چھوڈ  گیا 

  ہم نے خود  کو سوچ  سمجھ  کر تھوڑا مہنگا  رکھا  ہے



   تھا   اعلان   کہانی  میں    اک   روز  ندی   بھی  آےگی 

  ہم   نے  اس  امید  میں اب تک  خود  کو پیاسا رکھا ہے 



   ہم  کو ہر چہرے کے پیچھے سو سو چہرے دکھتے ہیں 

   قدرت  نے  آنکھوں  میں  جانے  کیسا  شیشہ  رکھا ہے 



   اکثر   شیریں   کی   چاہت   نے  کوہ  کنی   کروائی  ہے 

  اکثر  پربت   کے   سینے  پر  ہم   نے   تیشہ   رکھا  ہے

  

    ہم  کو  اب   خود  رستہ   چل  کر  منزل   تک  پہنچاےگا  

   کاندھوں  پر  سورج  ہے  اپنے سر  پر  سایہ  رکھا  ہے 



    ہم  سے  باتیں  کرنے  والے  الجھن میں پڑ  جاتے  ہیں 

   ہم  نے   اپنے   اندر  خود  کو  اتنا    بکھرا   رکھا   ہے 



   تم  نے  لہجہ  میٹھا  رکھ   کر  تیکھی  باتیں   بولی  ہیں

   ہم  نے  باتیں  میٹھی  کی  ہیں   لہجہ   تیکھا   رکھا  ہے



    دنیا   والوں  نے  تو   پوری  کوشش   کی  ٹھکرانے  کی 

    لیکن  اپنی  ضد  میں  ہم  نے  خود  کو   منوا  رکھا   ہے
منیش شکلا

No comments:

Post a Comment