Follow by Email

Friday, 20 July 2012

فقیرانہ طبیعت تھی بہت بیباک لہجہ  تھا 
کبھی مجھمیں بھی ہنستا کھیلتا اک شخص رہتا تھا 

بگولے ہی بگولے ہیں مری ویران آنکھوں میں 
کبھی ان ریگزاروں میں کوئی دریا بھی بہت تھا 

تجھے  جب  دیکھتا ہوں تو خود اپنی یاد آتی ہے 
مرا  انداز  ہنسنے کا کبھی تیرے  ہی  جیسا  تھا 

کبھی  پرواز پر میری ہزاروں دل دھڑکتے  تھے 
دعا  کرتا   تھا کوئی تو کوئی  خشباش  کہتا  تھا 

کبھی ایسے ہی چھائی تھیں  گلابی   مجھ  پر 
کبھی پھولوں کی صحبت سے مرا دامن بھی مہکا  تھا 

میں تھا  جب کارواں کے  ساتھ تو  گلزار  تھی  دنیا  
مگر تنہا ہوا تو  ہر  طرف  صحرا  ہی  صحرا  تھا 

بس  اتنا  یاد  ہے  سویا  تھا  اک  امید  سی  لیکر 
لہو سے بھر گیی آنکھیں ن جانے خواب کیسا تھا 

منش شکلا 


No comments:

Post a Comment