Follow by Email

Thursday, 30 August 2018



کوئی  تیرا  یہاں   ثانی   نہیں  ہے 
کہ سب میں آگ ہے پانی نہیں ہے 

تجھے پانے کے سب اسباب ہیں پر 
تجھے  پانے  کی آسانی  نہیں  ہے 

محبّت میں   خسارہ   تو  بہت  ہے 
مگر  اتنی  بھی  ارزانی  نہیں  ہے 

ابھی  ساحل  پہ  کشتی  مت   لگاؤ 
ابھی  ساحل  پہ  طغیانی  نہیں  ہے 

پریشانی   یہی    ہے   در  حقیقت 
ہمیں   کوئی   پریشانی   نہیں  ہے 

تری  ہر  بات  ہے  تسلیم   ہم  کو 
یہ  بھولاپن   ہے  نادانی نہیں ہے 

تہیہ    کر  چکے  ہیں خامشی  کا 
ہمیں   اب  داد   فرمانی  نہیں  ہے 

کئی   اشعار   تیرے    قیمتی  ہیں 
مگر  کوئی  بھی  لا ثانی نہیں ہے 

منیش' اب غیر ممکن ہے سلجھنا' 
اگرچہ   بات    الجھانی   نہیں  ہے 






No comments:

Post a Comment