Follow by Email

Wednesday, 28 December 2016



دشت میں خاک اڑانے سے کہاں تک بچتے 
ہم  ترا  ہجر  منانے  سے  کہاں  تک بچتے 

اتنے پر لطف اشارے تھے ترے لفظوں میں 
ہم  تری  بات میں آنے سے کہاں تک بچتے 

جس  سے  ملتے  وہ  تجارت  پہ  اتر آتا تھا 
خود  کو  بازار  بنانے  سے کہاں تک بچتے 

ہم   نے  ہر   جرم  سر  بزم   کیا   تھا  تسلیم 
لوگ پھر سنگ اٹھانے سے کہاں تک بچتے 

ہم  کو  ہر  طور  زمانے  سے  گزر  کرنا تھا 
ہم   بہر حال    زمانے  سے  کہاں تک بچتے 

ہم  ہی  ہر  بار  ہدف  بن  کے چلے آتے تھے 
تم  بھی  پھر تیر چلانے سے کہاں تک بچتے 

ایک     دن  جان  گیا   سارا   زمانہ   جس  کو 
خود  کو  وہ  بات  بتانے سے کہاں تک بچتے 

منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment