Follow by Email

Thursday, 18 July 2013



دل  برہم   کی   خاطر  مدّعا   کچھ  بھی  نہیں   ہوتا 
عجب  حالت  ہے  اب شکوہ  گلا کچھ بھی نہیں ہوتا 

کوئی  صورت  ابھرتی ہے نہ  میں مسمار ہوتا ہوں 
میں  وو  پتھر کہ  جسکا فیصلہ کچھ بھی نہیں ہوتا 

کسی  کو ساتھہ  لے لینا  کسی  کے  ساتھ  ہو  لینا 
فقیروں کے  لئے  اچھا  برا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

کبھی  چلنا مرے   آگے  کبھی  رہنا  مرے   پیچھے 
رہ   الفت  میں  چھوٹا  یا بڑا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

کبھی دل  میں مرے تیرے  سوا  ہر  بات  ہوتی  ہے 
کبھی دل میں مرے تیرے سوا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

وہی   ٹوٹی  ہوئ   کشتی  وہی   پاگل  ہوائیں    ہیں 
ہمارے   ساتھ   دنیا  میں  نیا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

یہ سودا ہے نگاہوں  کا   تجارت  دل  کی  ہے  لیکن 
 محبّت   میں  خسارہ    فایدہ  کچھ   بھی   نہیں  ہوتا 

بھلے  خواہش کروں تیری کسی بھی شکل میں لیکن 
مرا مقصد  پرستش  کے  سوا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

کبھی دو  چار  قدموں   کا  سفر  طے  ہو  نہیں  پاتا 
کبھی میلوں سے  لمبا  فاصلہ  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

فقط    کردار   کا    مارا  ہوا   ہے  ہر   بشر   ورنہ 
کوئی   انسان   اچھا    یا برا  کچھ   بھی  نہیں  ہوتا 

فلک   پر  ہی  ستاروں کا   کوئی  عنوان  ہوتا  ہے 
کسی  ٹوٹے   ستارے  کا  پتا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

اگر دیکھوں تو خامی ہی دکھائی دے ہر اک شے میں 
اگر سوچوں توخود  سے بدنما کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 

بظاہر  عمر  بھر  یوں  تو  ہزاروں   کام  کرتے  ہیں 
حقیقت  میں   مگر  ہمنے  کیا  کچھ  بھی  نہیں  ہوتا 
منش شکلا 




No comments:

Post a Comment