Follow by Email

Tuesday, 26 August 2014





  کسی  بھی شے پہ آ جانے میں کتنی دیر لگتی  ہے 
  مگر پھر  دل کو  سلجھانے میں کتنی دیر لگتی  ہے

 ذرا سا وقت لگتا ہے کہیں سے اٹھ  کے جانے  میں
  مگر پھر ل وٹ  کر  آنے  میں  کتنی   دیر  لگتی  ہے

بلا   کا   روپ   یہ   تیور    سراپا  دھار   ہیرے  کی
 کسی کے جان سے جانے میں  کتنی  دیر  لگتی  ہے

 فقط  آنکھوں  کی  جمبش سے  بیاں ہوتا  ہے افسانہ
کسی   کو   حال   بتلانے   میں  کتنی  دیر  لگتی  ہے

 سبہی  سے اوب کر یوں تو  چلے آے  ہو خلوت  میں
 مگر خود سے بھی اکتانے میں  کتنی  دیر  لگتی  ہے
شعور   میکدہ    اسکی    اجازت    ہی   نہیں     دیتا
وگرنہ   جام    چھلکانے  میں  کتنی  دیر   لگتی  ہے

یہ   شیشے  کا  بدن   لیکر  نکل  تو  آے  ہو  لیکن
کسی  پتھر  سے ٹکرانے میں  کتنی  دیر  لگتی  ہے 

منش شکلا


No comments:

Post a Comment