Follow by Email

Monday, 24 November 2014




             غزل

      
                 کوئی   تلاش  ادھوری  سی   رہ  گیئ  مجھ  میں 
                 کھٹک رہی  ہے  کسی  بات  کی  کمی  مجھ  میں 


                بہت    وسیع   ہے   میرے   غموں    کی   پہنائ

                      پناہ   مانگنے لگتی  ہے  ہر  خوشی   مجھ  میں      
                                     
                 کہاں   ہے   سہل   کسی    لفظ   کا    رواں   ہونا 
                 ٹھہر گیئ   ہے  بڑی  سخت  خامشی   مجھ   میں 


                 سفر  کی   رسم  نبھانے  کو  چل  رہا   ہوں  میں 

                 وگرنہ   تاب    سفر   اب   کہاں  بچی   مجھ  میں 


                  خیال   و  خواب   پہ   کائی   سی   جم   گئ    آخر 

                   ازل سے ٹھہری ہوئی  ہے  کوئی  ندی   مجھ  میں 


                   عجیب   رنگ    رہا    دل     کے     کارخانے   کا 

                  نہ  روشنی   ہی  سلامت  نہ   تیرگی  مجھ    میں 


                   وہ  آسماں   ہوں   کہ  ماتم  نصیب  ہے   جس  کا 

                     ستارے  روز  ہی  کرتے  ہیں  خودکشی  مجھ  میں 


                   وہ   ایک    بار   مرے   ساحلوں   پہ   اترا    تھا 

                    پھر اس  کے بعد  فقط  ریت  رہ  گئی   مجھ   میں 


                                          منش شکلا 




No comments:

Post a Comment