Follow by Email

Friday, 20 March 2015

           

                                                                               غزل


کچھ  پوشیدہ  زخم عیاں  ہو سکتے  تھے 
اس  سے ملکر درد رواں ہو سکتے  تھے 

ان   آنکھوں   کو  دیر   تلک   دیکھا  ہوتا 
ان آنکھوں میں خواب نہاں ہو سکتے تھے 

تم  نے  ایک   ستارے   کو   دنیا   سمجھا 
اس  کے  آگے اور  جہاں  ہو  سکتے تھے 

تم    تو   پہلے   دروازے  سے   لوٹ  آے 
بستی  میں  کچھ اور مکاں  ہو سکتے تھے 

رفتہ      رفتہ    آ    پہنچے    ویرانے   تک 
ہم   دیوانے   اور  کہاں  ہو    سکتے  تھے 

ہر   صورت  بنتی  تھی   اور   بگڑتی   تھی 
اس  عالم  میں  صرف گماں ہو سکتے تھے 

آگ     ہوا    اور   پانی     ہی   سرمایہ   تھا 
حد سے حد ہم لوگ  دھواں  ہو  سکتے  تھے 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment