Follow by Email

Tuesday, 6 October 2015





غزل 


مخالفین   کو   حیران   کرنے   والا   ہوں 
میں  اپنی ہار  کا اعلان  کرنے  والا   ہوں 

سنا ہےدشت  میں وحشت سکون پاتی ہے 
سو   اپنے آپکو  ویران  کرنے  والا  ہوں 

فضا  میں  چھوڈ  رہا  ہوں  خیال  کا  طایر 
سکوت  عرش  کو  گنجان  کرنے  والا ہوں 

مٹا   رہا   ہوں   خرد   کی  تمام   تشبیہیں 
جنوں  کا   راستہ  آسان   کرنے  والا  ہوں 

حقیقتوں    سے   کہو   ہوشیار   ہو جایئں 
میں اپنے  خواب کو میزان کرنے والا ہوں 

کوئی    خدا   محبّت   کو   باخبر   کر  دے  
میں خود کو عشق میں قربان کرنے والا ہوں 

سجا  رہا   ہوں   تبسّم   کا   اک   نیا   لشکر 
ہجوم   یاس  کا  نقصان  کرنے   والا   ہوں 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment