Follow by Email

Wednesday, 18 January 2017



غزل 

بہلنے  لگی  ہے ذرا سی  نمی  سے 
بھروسا  ہی اٹھنے لگا تشنگی  سے 

بہت  بے نیازی  دکھائی  تھی  ہمنے 
سو وہ بھی جدا ہو گیا بے رخی سے 

بہت  دن   کا  غصّہ  اتارا  کسی  نے 
اچانک  الگ  ہو   گیا   زندگی   سے 

تمھیں   ہم  سناتے  ہیں  اپنی  کہانی 
مگر  اس کا چرچہ نہ کرنا کسی سے 

تمہارے   لئے  غم  اٹھانے   پڑینگے 
تمھیں ہم نے چاہا ہے اپنی خوشی سے 

اب  اس کے پلٹنے کا امکاں  نہیں ہے 
وہ  اٹھ کر  گیا  ہے بڑی بے دلی سے 

بہت  بے  تکلّف  نہ  ہو  پاے  ہم  بھی 
سو  وہ  بھی  نہ آگے بڑھا دللگی سے 

ہمیں   آج  اپنے ا ندھیرے  ملے  ہیں 
مخاطب  ہوئے  ہیں  نئی  روشنی سے 

بس  اب  یاد  آنے  کی زحمت نہ کرنا 
تمھیں  ہم  بھلاتے  ہیں  لو آج ہی سے 

منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment