Follow by Email

Friday, 3 February 2017



غزل 

آؤ   ہم  تم   دونوں  مل کر  دنیا  کو   ٹھکراتے  ہیں 
باہر   سے زندہ  رہتے ہیں اندر سے مر جاتے  ہیں 

جانے  کب  تک صورت  نکلے چارہ گر کے آنے کی 
تب تک اپنی سانسوں سے ہی زنجیریں پگھلاتے ہیں 

اپنی   مدہوشی   کا  عالم   دیواروں   نے  دیکھا ہے 
ہم  اپنے  دل  کا  پیمانہ  خلوت  میں  چھلکاتے  ہیں 

تجھ  کو  کڑوی  لگتی  ہیں تو شاید کڑوی ہی  ہونگی 
ہم  تو بس تیری باتوں کو جیوں کا تیوں دہراتے ہیں 

دنیا  والوں  سے  کیا  چرچا  کرتے اپنے زخموں  کا 
وہ باتیں کرنے سے تو ہم خود سے بھی کتراتے ہیں 

یوں   تو  تم  کو  برسوں  پہلے  ہم  نے  اپنا  مان  لیا 
پھر بھی  اب  تک  نام  تمہارا  لینے  میں شرماتے ہیں 

دنیا    والے   ہنستا   گاتا   چہرہ   دیکھا   کرتے  ہیں 
ان کو کیا معلوم کہ ہم بھی روتے ہیں جھنجھلاتے ہیں

ہم  سے  شاید  چھوٹ  گیا ہے ساماں کوئی رستے میں 
رہ  رہ  کر کیوں پاؤں ہمارے چلتے ہیں رک جاتے ہیں 


ایک   اکیلا  دل  دنیا   کی  ساری   باتیں   ایک   طرف 
اک چھوٹی سی کشتی لے کر طوفاں سے ٹکراتے ہیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment