Follow by Email

Thursday, 16 February 2017




دل   بھی  جیسے  ہمارا  کمرہ    تھا 
کل    اثاثہ   زمیں   پہ   بکھرا    تھا 

آسماں     ہی    اٹھا    لیا     سر   پہ 
جانے   کیا  کچھ  زمیں  پہ گزرا  تھا 

پھر    نئ      خواہشی ں   ابھر   آئں 
دل    ابھی   حادثوں    سے  ابرا تھا 

چاند     کی     چاندنی     بجا     لیکن 
رنگ   اس  کا   بھی صاف ستھرا تھا 

کیا    ہوا    ڈوب    کیوں    گیا    آخر 
خواب   تو   ساحلوں  پہ    اترا   تھا 


آشیاں       تو       بنا      لیا     لیکن 
اب    ہمیں  آندھیوں  کا   خطرہ   تھا 

اب     فقط     زندگی      بتاتے    ہیں 
ورنہ    اپنا   بھی   ناز    نخرہ    تھا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment