Follow by Email

Wednesday, 15 February 2017



آہٹیں  آ   رہی     ہیں    سینے    سے
اب    مرض   بڑھ   گیا   قرینے  سے 

ختم     ہوتا    ہے   اب   سمندر   بھی 
اب    اتر    جائیے    سفینے     سے

اب    سراپا   نشے  میں  رہتے   ہیں
ہم   کو   روکا   گیا  تھا   پینے   سے

ہم     معانی     تلاش     کرتے    ہیں
ان   کو  مطلب ہے صرف جینے سے

جس     میں   ہم  پر  بہار   آئی  تھی
اب  بھی  ڈرتے  ہیں اس مہینے سے


اس    نے   اتنا    کرید   کر    دیکھا
ہم   چمکنے   لگے    نگینے   سے 

اپنے   وقتوں   میں  گم شدہ  تھے ہم
ہم   کو  ڈھونڈھا   گیا   دفینے   سے
منیش شکلا

No comments:

Post a Comment