Follow by Email

Tuesday, 7 February 2017




ایک ہی بار میں خوابوں سے  کنارا  کر کے 
بجھ   گیئ  دید  شب  وصل  نظارہ   کر  کے 

جز  ترے اور طریقے بھی نکل سکتے  تھے 
ہم نے دیکھا ہی نہیں خود کو دوبارہ کر  کے 

ہم تو بس بولنے والے تھے سبھی کچھ سچ سچ 
تم  نے  اچھا  ہی  کیا  چپ  کا  اشارہ  کر  کے 

ہم  تو  صدیوں سے اسی طور بسر کرتے ہیں 
تم  بھی  کچھ  روز  یہاں  دیکھو  گذارا کر کے 

خود  کو  سونپا  تھا  تمھیں ہم کو تمہارا کرنے 
تم   نے   لوٹایا  ہمیں  ہم  کو  ہمارا   کر  کے 

کر تے  رہتے  ہیں  بھر  وقت  تمہارا  چرچا 
خود  کو  چھوڈینگے کسی روز تمہارا کر کے 

اب  یہ  دریا  یہ   تلاطم   یہ   سفینہ   کیا  ہے 
ہم  تو  سب  بھول  گئے  تم کو سہارا کر  کے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment