Follow by Email

Friday, 17 February 2017




وجد     میں   جب   دست  و بازو    آ  گئے 
تب    جنوں    کے    ہوش   قابو    آ   گئے 

شب       گزاری     کا      وسیلہ    ہو   گیا 
ذہن   میں    یادوں   کے   جگنو   آ    گئے 

 تشنگی      نے    اس     قدر    ماتم     کیا 
ضبط    کی   آ نکھوں   میں   آنسو  آ  گئے 

اس      گلی    کے   موسموں   کو   یاد  کر 
درد     کی    شاخوں     پہ   ٹیسو  آ   گئے 

جن     سے    قابو   میں  کیا   جاتا  ہے دل 
تم    کو   شاید   سب    وہ    جادو   آ   گئے 

بھر    گئی   رنگیں   حبابوں    سے  زمیں 
پاؤں    میں  بارش کے   گھنگھرو   آ  گئے 

پھر     کوئی     کالا    گھنا     بادل    دکھا 
پھر   خیالوں   میں      وہ     گیسو    آ گئے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment