Follow by Email

Tuesday, 14 February 2017





کئی  چہرے  سلامت  ہیں  کئی  یادیں  سلامت  ہیں 
ابھی ٹوٹے ہوئے دل کی کئی  کرچیں  سلامت  ہیں 

خیالوں  کی لکیریں کیوں ادھورے خواب بنتی  ہیں 
نہ  اب   تعبیر  باقی  ہے نہ وہ آنکھیں  سلامت ہیں 

ابھی  چسپہ  ہے  میرے  ذہن  پہ  صحرا  کا  سنّاٹا  
ابھی خوابوں میں جلتی پیاس کی چیخیں سلامت ہیں 

بھلا تنہائی میں سونا شجر کس سے  ہنسے  بولے 
نہ  اب  طایر سلامت ہیں نہ ہی شاخیں  سلامت  ہیں 

یہ   ہے   بہتر   حدود  وقت  کے  باہر  نکل   جایئں 
یہاں  اب  دن  سلامت  ہیں  نہ ہی راتیں سلامت ہیں 

مسلسل  حافظے  پر  وقت  کی  چوٹیں  پڑیں  لیکن 
تری خوشبو سلامت  ہے   تری  باتیں  سلامت  ہیں 

ابھی  انکار  کی  جرات  دہکتی  ہے  مرے  دل  میں 
ابھی تک جسم میں کچھ خون کی بوندیں سلامت ہیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment