Follow by Email

Friday, 17 February 2017



صرف  بیاباں  بچتا  ہم   میں  بلکل  جنگل  ہو  جاتے 
شعر نہ کہتے تو  ہم   شاید  اب  تک  پاگل  ہو  جاتے 

ہم نے وقت پہ جی بھر رو کے خود  کو تازہدم  رکھا 
آنسو اندر  رکھے  رہتے  تو   ہم   بوجھل   ہو  جاتے 

سنتے  ہیں  ہم  تم کو چھو کر خوشبو آنے لگتی ہے 
کاش  ہمارے  شانے  لگتے  ہم  بھی صندل ہو جاتے 

تم  سے  ہم  کو  ملنا ہی تھا ہر صورت ہر حالت  میں 
تم  پربت  بن  جاتے  تو   ہم  جلکر   بادل   ہو  جاتے 

شکر  ہے کچھ میناروں کو تم نے یکلخت نہیں ڈھایا 
اتنی  دھول  اڈی   ہوتی  سب   دریا   دلدل  ہو  جاتے 

خالق   نے  سارا  سرمایا  ڈال  دیا  اک چہرے   میں 
اتنی  رونق  سے   تو  دونوں  عالم  اجمل  ہو  جاتے  

کاش مرے مصرعوں سے بالکل اس کی آنکھیں بن جاتیں 
کاش  مرے  یہ  لفظ  کسی کی آنکھ کا کاجل  ہو  جاتے 


منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment