Follow by Email

Friday, 14 June 2013



چاند ستارے مٹھی  میں تھے سورج سے یارانہ تھا
کیا دن تھے  جب  خواب  نگر  میں  اپنا آنا جانا تھا

اک جادو سا جیسے میری ہر  دھڑکن  میں اترا  تھا
مجھکو خود معلوم  نہیں  میں کیوں اتنا دیوانہ  تھا

جانے کیسا شخص  تھا باتیں دیوانوں سی کرتا  تھا
خوابیدہ آنکھیں   تھیں لب  پر پریوں کا افسانہ  تھا

سب مجھکو سودائی  کہ کر تجھکو رسوا کرتے تھے
 نظریں میری  اور تھیں  لیکن تیری  اور  نشانہ تھا

ایک کہانی جسمیں شاید سب کچھ تے تھا پہلے سے
  ایک فسانہ جسمیں  سب کچھ ملکر بھی کھو جانا تھا

تجھے  مکمّل  کرنا تھا  اک  حصّہ میرے قصّے کا
مجھکو  تیرے   افسانے  میں  اک  کردار نبھانا تھا

بھیڈ   سے بہار  آکر  دیکھا  تھا دنیا  کے میلے  کو
ساری  چہل  پہل  کے  پیچھے  جاںلیوا  ویرانہ  تھا

کب تک میں سمجھاتا اپنے دل کی اک اک دھڑکن کو
تیری  بستی  میں  تو  ہر اک حسرت پر جرمانہ  تھا

آخر  تھک  کر  چھوڈ دیا  ہستی کی الجھی گتھی کو
سلجھانے  کی  کوشش کرنا اور  اسے  الجھانا  تھا
منش شکلا


No comments:

Post a Comment