Follow by Email

Tuesday, 19 November 2013



کسی کی  یاد  سے   تنہائیاں  چمک   اٹھیں
کھلا جو چاند  تو    پرچھائیاں  چمک  اٹھیں

چھپانا  راز   محبّت    نہ   ہو  سکا    ممکن
کسی کو دیکھ   کے  بیناییاں   چمک  اٹھیں

یہ  کون  آیا   اندھیروں  میں  روشنی  بنکر
سیاہ   بزم   کی    رعنا ئیاں   چمک   اٹھیں

سنا  ہے  گزرا  ہے  بیمار  کوئی   ایسا  بھی
کہ جسکو چھو کے مسیحاییاں  چمک اٹھیں

کوئی چراغ سی نظروں سے چھو گیا مجھکو
مری    تھکن    کی   تواناییاں   چمک  اٹھن

کبھی  جو   دیکھا  دھنوا  اٹھتا آبشاروں سے
تو  دل   میں  یار  کی  انگڈاییاں  چمک  اٹھن

غزل  میں آج خیالوں کے کچھ شرر بکھرے
مری      تمام     شناساییاں     چمک   اٹھیں
منش شکلا



No comments:

Post a Comment