Follow by Email

Monday, 29 May 2017




 گھبرا   کر  افلاک  کی  دہشت  گردی   سے 
 خود   کو ہم نے  توڈ  دیا  بے  دردی   سے 

 ہم    نے  خود    یہ   حال   بنایا   ہے  اپنا 
 ہم  سے  باتیں  مت  کرئے  ہم  دردی  سے 

  جب   خود   کو   ہر  طور  بیاباں   کر   ڈالا 
تب   جاکر   باز   آے   دشت   نوردی   سے 

اب  بھی  کیا  کچھ  کہنے  کی  گنجایش  ہے 
سب  کچھ ظاہر ہے چہرے  کی   زردی  سے 

تم   آکر  کچھ  وقت   کی  گرماہٹ  بھر   دو 
لمحے  کانپ  رہے  ہیں دیکھو  سردی  سے 

ہم   اک  بار  بھٹک  کر   اتنا   بھٹکے  ہیں 
اب   تک   ڈرتے   ہیں   آوارہ   گردی  سے 

ہم  بھی  عشق  کی پگڈنڈی سے گزرے  ہیں 
واقف   ہیں  پیچ  و  خم  کی  سردردی  سے 

منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment