Follow by Email

Monday, 1 April 2013

کچھ   بزرگوں  سے  سنی  ہے  داستان    لکھنؤ
با    ادب     ناز    و  ادا   وہ   مہوشان    لکھنؤ

منفرد     لہجہ   بیاں  کا   اک  عجب   سا  بانکپن
بھیڈ     میں  تنہا    دکھے   ہیں  صاحبان   لکھنؤ

سبکی   منزل   ہے  محبّت سبکا   وعدہ   ہے  وفا
اپنی    دھن   میں   جا  رہے  ہیں  رہروان  لکھنؤ

گونجتی     رھتی   ہے   ہر  سو  اک  صدا  آفریں
  گوشے  گوشے  میں  بسے  ہیں  عاشقان  لکھنؤ

وحشتوں  کےشور وغل میں کس قدربےخوف ہیں
امن     کا     پرچم      اٹھاے    مخلصان    لکھنؤ

صد سلامت    صد سلامت    صد سلامت   سالہا
یہ     دعایں     مانگتے     ہیں    دلبران    لکھنؤ

زندگی   کے   عاشقوں   کی   یہ   عبادتگاہ    ہے
مٹ      نہ   پایگا    کبھی   نام   و   نشان   لکھنؤ

منش شکلا

No comments:

Post a Comment