Follow by Email

Monday, 1 April 2013

اک خواب چھن سے ٹوٹ کے آنکھوں میں گڈ گیا
اتنا   ہنسے  کہ   چیخ   کے   رونا  بھی  پڑ   گیا

 یہ     کسنے   اپنی    ٹیس     ورق  پر  اتار   دی
یہ  کون  اپنے دل    کو   سیاہی     سے  جڈ  گیا

جب   تک   ہمارے  نام  سے    واقف  ہوا  جہاں
تب    تک     ہمارے   نام    کا  پتھر   اکھڑ  گیا

لہروں    کا شور   تھم   گیا  طوفان   سو    گئے
کشتی    کے   ڈوبتے    ہی    سمندر  اجڈ    گیا

اب  تو  خیال  یار  سے   ہوتا   ہے  خوف   سا
چہرہ     کسی    کی   یاد     کا    کتنا بگڑ   گیا

کر   تو  لیا   ہے  درد   کی  لہروں    کا  سامنا
لیکن     ہمارے   ظرف   کا   بخیہ    ادھڑ   گیا

اسکو     ٹھہر  کے دیکھتے حسرت ہی  رہ گیئ 
وہ     دفعتاً    ملا    تھا     اچانک   بچھڑ    گیا

منش شکلا

No comments:

Post a Comment