Follow by Email

Monday, 1 April 2013



انھیں  ہاتھوں  سے  اپنی  زندگی  کو  چھو  کے  دیکھا  تھا  
وہ  سپنا  تھا  یا  پھر مینے  کسی کو  چھو  کے  دیکھا  تھا 

کئی رنگوں کے منظر آج  بھی   رقصاں  ہیں  آنکھوں   میں 
مری  نظروں نے  ایسی   سادگی  کو  چھو  کے   دیکھا  تھا 

عجب   سی   آگ    میں    جلنے     لگا  سارا    بدن    میرا 
مرے ہوٹھوں نے اسکی  تشنگی  کو  چھو کے  دیکھا  تھا 

کسی   کے  لمس کا   جادو  مری  رگ  رگ  میں  اترا  تھا 
مرے  احساس نے   دیوانگی  کو  چھو   کے   دیکھا    تھا 

فقط  اک   بار  مینے   چاند   کی   زلفیں   سنواری   یتھیں  
فقط اک  بار  مینے  روشنی   کو   چھو   کے   دیکھا   تھا 

بھلا  کس     کو    یقیں    آےگا    میری    بات    پر   لیکن 
کبھی مینے   مجسّم   چاندنی   کو   چھو   کے   دیکھا   تھا 

پگھل   کر   به   گئے   بیباک   لہروں   کے   اشاروں    پر 
کناروں  نے  عبث  چڑھتی  ندی   کو  چھو  کے  دیکھا  تھا 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment