Follow by Email

Tuesday, 29 October 2013

خیالوں کا فلک احساس کے تاروں سے جڑنے میں
رہے  مصروف  ہم  کچھ  مشتبہ   الفاظ گدھنے میں 

 ہمیں   کچھ  اور کرنے  کی تو مہلت ہی نہ مل  پایئ 
ہوا   ضایع   ہمارا  وقت  بس  ملنے  بچھڑنے  میں 

 کہیں  برسوں  میں  جاکر  کھل  کا  سامان جٹ  پایا 
  مگر  اک   پل  لگا  اچھا  بھلا  مجمع  اکھڈنے  میں 

   کوئی  لمحہ  نہیں  ایسا کہ جو  ہاتھوں  میں آیا   ہو 
   گیئ  ہے  عمر  ساری  عمر  کی  تتلی  پکڑنے  میں 

   ہم  اپنے  جرم  کا  اقبال  تو  ویسے  بھی  کر  لیتے 
    عبث   جلدی  دکھائی   یار  نے   الزام   مڈھنے  میں 

    کہیں  آخر   میں  جاکے  عشق کا مطلب سمجھ  پاے 
     لگی  اک  عمر  ہمکو عاشقی  کا درص  پڑھنے  میں 

      اجڑنے   کا   بہت  افسوس   ہے  لیکن  ستم  یہ  ہے 
      تمہارا    ہاتھ    شامل   تھا  مری  دنیا  اجڑنے   میں 

       ہوس  بچتی  ہے  سر  پر  عشق  کا  الزام  لینے سے 
        محبّت  اف   نہیں   کرتی مگر سولیپہ پہ  چڈھنے میں 

       کیسے  دریا  کی حاجت  ہے کسے  سیراب  ہونا  ہے
       مزہ   آنے   لگا   اب  ریت    پر  ایڈی  رگدنے   میں 

منش شکلا 





No comments:

Post a Comment