Follow by Email

Monday, 22 June 2015




    غزل 

 محبّت   کی    فراوانی    مبارک 
تمھیں آنکھوں کی طغیانی مبارک 

تمھارا  چاند  پورا  ہو  گیا   ہے 
تمھیں   ٹھہرا  ہوا  پانی  مبارک 

اتر   آیا  ہے  دل  میں  نور کوئی 
تمھیں  چہرے  کی  تابانی مبارک 

کسی  پر پھر یقیں کرنے لگے ہو 
تمھیں  پھر سے یہ  نادانی مبارک 

تم   اپنی   بات   کہنا   جانتے  ہو 
تمھیں  لفظوں  کی  آسانی  مبارک 

تمھیں  یہ شور و غل نیرنگ دنیا 
ہمیں  صحرا  کی  ویرانی  مبارک 

کوئی  صورت  مرتب ہو رہی ہے 
خیالوں   کی    پریشانی   مبارک 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment