Follow by Email

Wednesday, 24 June 2015



            غزل

            ماضی  میں  کھلنے  والے  ہر  باب  سے  لپٹی  رہتی  ہیں
            جانے   والوں   کی   یادیں   اسباب   سے  لپٹی  رہتی  ہیں

            اہل   سفر   تو   گم  ہو  جاتے  ہیں   جاکر   گہرائی   میں
             کشتی   کی   ٹوٹی   باہیں   گرداب   سے   لپٹی  رہتی  ہیں

             کبھی کبھی کچھ ایسے دلکش منظردکھتے  ہیں شب بھر 
             نیند بھی کھل جائے تو آنکھیں  خواب سے لپٹی رہتی ہیں

             ترک   تعلّق   ختم   نہیں   کر   پاتا  ہے  احساسوں    کو
              رشتوں  کی  ٹوٹی   کڑیاں  احباب  سے   لپٹی   رہتی  ہیں

              طوفانوں   کا   زور   بہا  لے   جاتا   ہے    بنیادوں    کو
               ریزہ  ریزہ   تعمیریں   سیلاب   سے   لپٹی    رہتی    ہیں

            اجڑے   گھر  کی  ویرانی  کا   سوگ   منانے  کی  خاطر
             خستہ  چھت  کی  شہتیریں  محراب  سے لپٹی  رہتیں ہیں

              اس کو دن بھر  تکتے  تکتے  ڈوب  تو  جاتا  ہے  لیکن
              سورج  کی  بجھتی  نظریں  مہتاب  سے  لپٹی  رہتی  ہیں

منش شکلا 

3 comments:

  1. Great !I've been searching google for several hours looking for relevant info on this, they definitely need to position your site on the first page!












    Shakti Prash | Hanuman Chalisa Yantra | Air Sofa Cum Bed |
    Zero Addiction | Hot Shaper | Allah Barkat Locket | Step Up Height growth | Body Buildo

    ReplyDelete
  2. Travel And Tour Operators In India Book At Lowest Price At Cheapest Price And Get More Discount. Tour Operators in India

    ReplyDelete