Follow by Email

Thursday, 25 June 2015




                       غزل 

     ہر  منظر  کا  مول   چکانا  پڑتا    ہے 
     آنکھوں   کو اک دن پتھرانا  پڑتا  ہے 

     منزل تک سب دشت  زدہ ہو جاتے ہیں 
     رستے   میں  اتنا   ویرانہ   پڑتا   ہے 

     جو  باتیں لا حاصل  ٹھہریں  پہلے بھی 
     ان باتوں   کو  ہی  دہرانا    پڑتا   ہے 

     خواہش  ہے   اپنا  قصّہ لکھ دیں لیکن 
     بیچ   میں   تیرا  بھی  افسانہ  پڑتا  ہے 

      جھوٹ کے اپنے خمیازے تو ہوتے ہیں 
    لیکن  سچ  پر   بھی  جر مانہ  پڑتا ہے 

     گرویدہ    ہونا    پڑتا   ہے   ہر  شے پر 
     پھر ہر اک   شے  سے  اکتانا  پڑتا  ہے 

      بستی  ہم   میں  سنّاٹے   بھر  دیتی  ہے 
       صحرا    صحرا   شور   مچانا   پڑتا  ہے 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment